بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

17 ذو الحجة 1441ھ- 08 اگست 2020 ء

دارالافتاء

 

ذومعنیٰ بات کہنا


سوال

میراسوال ہے کہ ذومعنی بات یعنی وہ بات جس کے دو مطلب نکلتے ہوں جب اس شخص سےکہاجائے تو بات پلٹ دیتے ہیں کہ میرایہ نہیں یہ مطلب تھا اس قسم کی ذومعنی بات کی شرعاً حیثیت کیا ہے؟ اور اس قسم کی بات کس کےزمے آتی ہے۔

جواب

مذکورہ شخص دومعنیٰ بات کسی ظلم سےبچنےکی خاطرکرتاہےتو ایسا کرنےکی گنجائش ہے اوراگرکسی کو دھوکہ دینے کی خاطرذومعنیٰ بات کرتاہے تواس طرح کا عمل شرعاً درست نہیں ہے اورایسےشخص کے متعلق حدیث میں واردہےکہ قیامت کےدن اس کی زبان آگ کی بنادی جائےگی۔


فتوی نمبر : 143101200383

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں