بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

14 شوال 1445ھ 23 اپریل 2024 ء

دارالافتاء

 

ذبح سے پہلے گوشت فروخت کرنا


سوال

 زندہ جانور کے گوشت کو ذبح سے قبل فروخت کرنا جائزہے یا ناجائز ہے؟

جواب

ذبح سے پہلے زندہ جانورکا گوشت کی  فروخت کرنا جائز نہیں ہے، کیونکہ ذبح سے پہلے یقینی طور پر نہیں معلوم کہ کتنا گوشت نکلے گا اور صحیح ہوگا یا خراب ہوگا، اور یہ بات بعد میں نزاع اور جھگڑے کا باعث بن سکتی ہے،اس لیے زندہ جانور کے گوشت کی خرید و فروخت جائز نہیں۔

مجمع الأنهر في شرح ملتقى الأبحر میں ہے:

"(ولا) يجوز (بيع اللحم في الشاة) لاحتمال أن يكون مهزولا أو سمينا فيفضي إلى النزاع."

 (ج:2، ص:56، ط: دار احیاء التراث العربی)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144501101683

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں