بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

12 ذو القعدة 1445ھ 21 مئی 2024 ء

دارالافتاء

 

زکات کی ادائیگی میں قیمتِ فروخت کا اعتبار کیا جائے گا


سوال

زید کا کہنا ہے کہ مال تجارت کی زکاۃ میں قیمت خرید کا اعتبار ہوتا ہے، قیمت فروخت پر کوئی واضح دلیل نہیں ہے، آیا زید کا یہ قول درست ہے؟

جواب

واضح رہے کہ مالِ تجارت کی زکات کی ادائیگی میں قیمتِ فروخت کا اعتبار کیا جائے گا۔

 فتاوی شامی  میں ہے:

"و تعتبر القيمة يوم الوجوب، و قالا : يوم الأداء، و في السوائم يوم الأداء إجماعاً، وهو الأصح، ويقوم في البلد الذي المال فيه".

( كتاب الزكاة ،ج:2،ص:286،ط: سعيد)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144403102362

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں