بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

9 محرم 1446ھ 16 جولائی 2024 ء

دارالافتاء

 

والد اور بھائی بہن کے درمیان ترکہ کی تقسیم


سوال

ایک غیر شادی شدہ عورت کا انتقال ہوا،ترکہ میں پانچ لاکھ روپے  ہیں، ورثاء میں والد، تین بھائی اور تین بہنیں ہیں۔

ترکہ کیسے تقسیم ہوگا؟  والد ، بھائی اور بہنوں کو کتنا کتنا حصہ ملے گا؟

جواب

صور تِ مسئولہ میں مرحومہ کی جائیداد کی تقسیم کا شرعی طریقہ یہ ہے کہ مرحومہ کے حقوقِ متقدمہ یعنی تجہیز و تکفین کا خرچہ نکالنے کے بعد ، اگر مرحومہ   پر قرضہ ہےتو  اس کو کُل ترکہ میں سے ادا کرنے کے بعد، اور اگر مرحومہ نے کوئی جائز وصیت کی ہے،تو  اس کو بقیہ مال کے ایک تہائی  میں سے نافذ کرنے  کے بعد باقی کُل ترکہ منقولہ وغیر منقولہ کے اکیلے حق دار مرحومہ کے والد ہیں، والد کی موجودگی میں بھائی بہنوں کو  کچھ نہیں ملے گا۔

صورتِ تقسیم یہ ہے:

میت: 1

والدبھائیبھائیبھائیبہنبہنبہن
1محروم

 

فتاوی شامی میں ہے:

"ثم العصبات بأنفسهم أربعة أصناف جزء الميت ثم أصله ثم جزء أبيه ثم جزء جده (ويقدم الأقرب فالأقرب منهم) بهذا الترتيب،

(قوله: ويقدم الأقرب فالأقرب إلخ) أي الأقرب جهة ثم الأقرب درجة ثم الأقوى قرابة فاعتبار الترجيح أولا بالجهة عند الاجتماع، فيقدم جزؤه كالابن وابنه على أصله كالأب وأبيه ويقدم أصله على جزء أبيه كالإخوة لغير أم وأبنائهم."

(کتاب الفرائض، فصل في العصبات، ج:6، ص:774، ط: دار الفکر)

فقط والله اعلم


فتوی نمبر : 144511102557

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں