بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

12 محرم 1446ھ 19 جولائی 2024 ء

دارالافتاء

 

ولی اور بہرام نام رکھنا کیسا ہے؟


سوال

 میں اپنے بیٹے کا نام ولی اشرف یا بہرام اشرف رکھنا چاہتا ہوں، راہنمائی فرمادیں!

جواب

’’ولی‘‘  کے معنی دوست کے ہیں، اس کا شمار آپ ﷺ کے صفاتی ناموں میں سے بھی ہوتا ہے، لہذا’’ ولی‘‘  نام رکھنا درست ہے۔’’بہرام ‘‘  ایک ستارہ"مریخ"کا نام ہے۔(فیروز اللغات، ص: 227ط:فیروز سنز)،سلف صالحین کے انساب میں بھی اس نام کا استعمال ملتا ہے،اور عراق کے ایک بادشاہ کا نام بھی تھا ،لہٰذا یہ نام رکھنا جائز ہے۔باقی اس سے بہتر معنی والا لفظ ہو تو زیادہ بہتر ہے۔ 

اسد الغابۃ میں ہے:

"5533- يزيد بن بهرام

س: يزيد بن بهرام قَالَ أبو حاتم بن حبان: هُوَ المقعد الَّذِي دعا عَلَيْهِ رسول الله صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ذكر فِي الميم.

أخرجه أبو موسى مختصرا."

(أسد الغابة في معرفة الصحابة ،5/ 445، ط : دار الكتب العلمية)

تاریخ کبیر میں ہے:

"[7672] عبد الحميد بن بهرام، الفزاري، المدائني .

سمع شهر بن حوشب.

سمع منه ابن المبارك، ومحمد بن يوسف.

قال علي، عن يحيى: من أراد حديث شهر فعليه بعبد الحميد."

(التاريخ الكبير للبخاري،‌‌ حرف العين،  ‌‌باب عبد الحميد، 7/ 60، الناشر: الناشر المتميز للطباعة والنشر والتوزيع، الرياض)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144508102116

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں