بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

13 صفر 1442ھ- 01 اکتوبر 2020 ء

دارالافتاء

 

عروہ نام کا معنی اور رکھنے کا حکم


سوال

’’عروا‘‘  کے معنی کیا ہے؟

جواب

مذکورہ نام کا درست تلفظ  ”عُرْوَه“ ہے ، اس  کے معنی ہیں:  قابلِ اعتماد چیز ، حلقہ، ذریعہ اتحاد، ؛ لہذا  اس معنی کے اعتبار سے "عروہ" نام رکھنا درست ہے۔ اس کے علاوہ ’’عروہ‘‘:  ایک  صحابی رضی اللہ عنہ کا نام ہے، نیز بہت بعض  تابعین کے اسماء بھی ’’عروہ‘‘  ہیں۔ صحابہ کے نام رکھنے میں معنی کی طرف دیکھنے کی ضرورت نہیں ہوتی۔ کسی صحابی کا یہ نام ہونا ہی اس کے بابرکت ہونے کے لیے کافی ہے۔لہذا عروہ نام رکھنا درست اورصحابی کی جانب نسبت ہونے کے باعث مستحسن ہے۔  فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144108201625

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں