بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

19 ذو الحجة 1441ھ- 10 اگست 2020 ء

دارالافتاء

 

بیوہ، دو بھائی اور دو بہن میں تقسیم میراث


سوال

فوت ہونے والے کی میراث میں جو کل 31 لاکھ 97 ہزار 3 سو 48 روپے ہے ایک بیوہ، مرنے والے کے 2 بھائیوں اور 2 بہنوں کا کتنا کتنا حصہ بنے گا؟ 

جواب

صورتِ مسئولہ میں مرحوم کے ذمے اگر قرض ہوں تو ان کی ادائیگی کے بعد اور جائز وصیت کی ہو تو اسے نافذ کرنے کے بعد بقیہ ترکہ (سوال کے حساب سے 31 لاکھ 97 ہزار 3 سو 48 روپے) میں سے بیوہ کو 799,337 روپے، ہر بھائی کو بھی 799,337 روپے اور ہر بہن کو  399,668.5روپے ملیں گے۔

نوٹ : یہ تقسیم اس صورت ہے جب مرحوم کے انتقال کے وقت اس کے والدین اور اولاد میں سے کوئی نہ ہو۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144110200305

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں