بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

14 ذو القعدة 1445ھ 23 مئی 2024 ء

دارالافتاء

 

سودی رقم کسی فلاحی ادا رےکو یا فی سبیل اللّٰہ لنگر خانےمیں دینے کا حکم


سوال

ایک شخص نے دس سال پہلے میزان بینک میں اکاؤنٹ کھلوایا تھا ،اسکے منافع کو اسلامی بینکنگ جانتے ہوئے استعمال کرتا رہا ، اب اس کے علم میں یہ بات آئی ہے کے یہ کوئی اسلامی بینکنگ نہیں ہے بلکہ سود ہے،اب یہ رقم کسی فلاحی ادا رےکو یا فی سبیل اللّٰہ لنگر خانےمیں بغیر ثواب کی نیت کے دے سکتا ہے ؟

جواب

واضح رہے کہ  جن افراد سے یا ادارے سے سود وصول کیا ہو اگر ان کو لوٹانا ممکن ہو تو اصل افراد کو واپس کرنا شرعًا ضروری ،اور اگرواپس کرنا ممکن نہ ہو تو  اس  رقم کو فقراء و مساکین میں ثواب کی نیت کے بغیر صدقہ کر دینا ضروری ہے، لہذا صورت مسئولہ میں اگر  فلاحی ادا رےیا فی سبیل اللّٰہ لنگر خانےوالے فقراء و مساکین کو ثواب کی نیت کے بغیر  تقسیم کرناچاہیں  توکرسکتے ہیں۔

فتوی شامی میں ہے:

"والحاصل أنه إن علم أرباب الأموال وجب رده عليهم، وإلا فإن علم عين الحرام لا يحل له ويتصدق به بنية صاحبه."

(باب البیع الفاسد ،مطلب فیمن ورث مالا حراما،ج:5،ص:99،ط:سعید)

المبسوط للسرخسي میں ہے:

'‌'والسبيل ‌في ‌الكسب ‌الخبيث ‌التصدق.''

(كتاب البيوع،أنواع الربا،ج:12،ص:172،ط:مطبعة السعادة،مصر)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144411100822

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں