بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

14 ذو القعدة 1445ھ 23 مئی 2024 ء

دارالافتاء

 

صرف تفسیر اور شرحِ حدیث کی کتاب پڑھ کر دین سمجھنے والے شخص کے لیے رہنمائی


سوال

میری عمر تقریباً 17 سال ہے، مجھے فارغ وقت میں کتابیں پڑھنے کا بہت شوق ہے۔ میں دین کے بارے میں مزید جاننا چاہتا ہوں اور دین میں مضبوط بننا چاہتا ہوں۔ میں اس مقصد کے لیے تفسیر پڑھنا چاہتا ہوں اور مفتی محمد شفیع عثمانی رحمۃ اللہ علیہ کا معارف قرآن پڑھنا چاہتا ہوں، (جسے میرے خیال میں سمجھنا میرے لیے آسان ہو سکتا ہے) لیکن کچھ لوگ صرف تفسیر پڑھنے کی حوصلہ شکنی کرتے ہیں گھر میں؛  جیسا کہ ہو سکتا ہے (اگر غلط پڑھا یا سمجھا جائے تو) دین سے دور رہ سکتا ہے۔ لیکن مجھے جو مسئلہ درپیش ہے وہ یہ ہے کہ میں اپنے آس پاس کے کسی عالم کو نہیں جانتا جو میری اس عمر میں مجھے پڑھا سکے اور کسی استاد سے سیکھنا فی الحال میرے لیے ممکن نہیں ہے اور میں ابھی تک تفسیر سیکھنا چاہتا ہوں۔ اس تفسیر کو گھر پر خود پڑھیں اور اللہ تعالیٰ سے ہدایت اور مدد کی دعا کریں۔ میں بھی حدیث کے بارے میں سیکھنا چاہتا ہوں اور مولانا منظور نعمانی (رح) کی ایک حدیث کی کتاب معارف حدیث پڑھنا چاہتا ہوں (جو میرے خیال میں آسان ہو جائے گی  مجھے سمجھنے کے لیے) کیا میں اسے اپنے اس عمر میں گھر پر بھی پڑھ سکتا ہوں؟ اگر ان کو سمجھنا مشکل ہے تو براہ کرم میرے لیے دیگر تفسیر اور حدیث کی کتابیں تجویز فرمائیں۔ 

جواب

صورت مسئولہ میں آپ  مفتی شفیع صاحب کی تفسیر ’معارف القرآن‘ اور مولانا منظور نعمانی صاحب کی کتاب ’معارف الحدیث‘ سے استفادہ کر سکتے ہیں، تاہم صرف ان کتب کے مطالعہ پر اکتفا پر نہ کریں بلکہ علماء کرام سے تعلق بھی قائم کریں اور ان سے رہنمائی لیتے رہیں۔ علماء سے تعلق جوڑنے کے لیے مقامی مسجد (جہاں آپ باجماعت نمازوں کا اہتمام کرتے ہوں) کے صالح دیندار لوگوں کی مدد لی جاسکتی ہے۔ اللہ کے فضل سے علماءِ کرام نے دنیوی مشاغل میں مصروف لوگوں کے لیے بھی  دراسات دینیہ کے نام سے مختصر دینی کورس کا اہتمام کیا ہے، آپ اگر تفصیلی دینی کورس نہیں کر سکتے تو بہتر ہے کہ کسی مختصر دینی کورس کا حصہ بن جائیں۔

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144310100239

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں