بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

13 ذو القعدة 1442ھ 24 جون 2021 ء

دارالافتاء

 

شرکیہ عقائد رکھنے والے امام کی اقتداء کا حکم


سوال

کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام اس بارے میں کہ بریلوی کے پیچھے نماز ہوجاتی ہے یا نہیں ؟براہِ کرم جلد جواب دیں۔

جواب

صورت مسئولہ میں اگر کوئی بھی شخص شرکیہ عقائد رکھتا ہو،یعنی اللہ تعالیٰ کی صفات میں سے کسی بھی صفت میں کسی کو شریک ٹھرائے جیسے کہ حضور اکرمﷺ کے حاضر و ناظر ہونے کا یا اللہ تعالیٰ کے علاوہ کسی اور کے عالم الغیب ہونے کا عقیدہ وغیرہ تو ایسے امام کے پیچھے نماز نہیں ہوگی اوراگر شرکیہ عقائد تو نہ رکھتا ہومگر بدعات میں مبتلاء ہو تو ایسے امام کے پیچھے نماز پڑھنا مکروہِ تحریمی ہے ۔


فتوی نمبر : 143101200040

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں