بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 26 فروری 2020 ء

دارالافتاء

 

شیعہ کے گھر کا کھانا


سوال

السلام علیکم،ایک بندہ ناز پلازا میں ایک دوکان پر کام کرتا ہوں،جس کے پاس کام کرتا ہوں وہ نوجوان لڑکا اہل تشیع ہے۔اب مسئلہ یہ ہے کہ وہ دوپہر کا کھانا اپنے گھر سے لے کر آتا ہے،تو کیا اس طرح اہل تشیع کے گھر سے آیا ہوا کھانا اس کے ساتھ بیٹھ کر کھانا جائز ہے؟

جواب

مذکورہ صورت میں اگر اس کھانے میں حرام اجزاء شامل نہ ہوں تو صرف اہل تشیع ہونے کی وجہ سے اس کا کھانا حرام نہیں ہوگا،اس کا کھانا اس کے ساتھ بیٹھ کر کھا سکتے ہیں۔


فتوی نمبر : 143506200037

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے