بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

20 شعبان 1445ھ 02 مارچ 2024 ء

دارالافتاء

 

وما حبُّ الديارِ شَغَفْنَ قلبي شعر کے متعلق چند سوالات


سوال

1- وما حبُّ الديارِ شَغَفْنَ قلبي ... ولكن حبُّ من سَكَنَ الديارا

اس شعر کی ترکیب نحوی اور اسی اعتبار سے اردو ترجمہ مطلوب ہے۔

2- نیزشَغَف کے لغوی معنی کے اعتبار سے تو اس کا فاعل حبُّہونا چاہیے، جیسا کہ معاجم میں مثالیں بھی اسی طرح دی گئی ہیں، شَغَفَ الْحُبُّ قَلْبَهُ،  مذکورہ شعر میں شَغَفْنَ  کا فاعل جمع مؤنث کی ضمیر ہو تو اس کا مرجع کسے بنائیں گے؟ اور پھر ترجمہ کیا ہوگا؟

جواب

1- "ما"  نافیہ، "حبُّ الديارِ" مرکبِ اضافی "ما"  کا اسم،  "شَغَفْنَ" فعل و فاعل "قلبي" مفعول بہ، فعل،  فاعل و مفعول بہ مل کر جملہ فعلیہ "ما" کی خبر،  "لكن" حرف استدراک،  "حبُّ من سَكَنَ الديارا" مرکبِ اضافی مبتدا،  "شَغَفَ قَلْبِيْ"  خبر محذوف۔

ترجمہ یوں ہے: محبوب کے علاقوں کی محبت نے میرے دل کو فریفتہ نہیں کیا، بلکہ اس کی محبت نے جو ان علاقوں میں رہتا  ہے (اس نے میرے دل کو فریفتہ کیا ہے)۔

2- نحوی قاعدہ ہے کہ جس جگہ مضاف مضاف الیہ سے مستغنی کردے اور مضاف الیہ کے قائم مقام ہوسکے کبھی کبھار وہاں  تذکیر و تانیث میں مضاف کے ساتھ مضاف الیہ والا معاملہ کیا جاتا ہے، یہاں  "حبُّ الديارِ"  میں  "حبّ" مضاف،   "الديارِ" مضاف الیہ کے قائم مقام ہوسکتا ہے،  مضاف الیہ جمع مؤنث ہے، اسی لیے مضاف کی طرف جمع مؤنث والی ضمیر راجع کی۔

جامع الدروس العربية (72 / 2):

"قد يكتسبُ المضافُ التأنيثَ أو التذكيرَ من المضاف إليه، فيُعامَلُ معاملةَ المؤنثِ، وبالعكس، بشرطِ أن يكون المضافَ صالحاً للاستغناءِ عنه، وإقامةِ المضافِ إليه مُقامَهُ، نحو "قُطعتْ بعضُ أصابعهِ"، ونحو "شمسُ العقلِ مكسوفٌ بِطَوعِ الهَوى"، قال الشاعر:

*أَمُرُّ عَلى الدِّيارِ، دِيارِ لَيْلى * أُقَبِّلُ ذا الجِدارَ وذَا الجِدارا*

*وما حُبُّ الدِّيارِ شَغَفْنَ قَلْبي * وَلكِنْ حُبُّ مَنْ سَكَنَ الدِّيارا*

والأولى مُراعاةُ المضاف، فتقولُ "قُطعَ بعضُ أصابعهِ. وشمسُ العقل مكسوفةٌ بِطَوع الهوى. وما حبُّ الديار شغفَ قلبي". إلا إذا كان المضافُ لفظَ "كُلّ" فالأصلحُّ التأنيث، كقوله تعالى: {يومَ تَجِدُ كلُّ نفسٍ ما عَمِلتْ من خير مُحضَراً}، وقولِ الشاعر:

*جادَتْ عَلَيْهِ كُلُّ عَيْنٍ ثَرَّةٍ * فَتَرَكْنَ كُلَّ حَديقَةٍ كَالدِّرْهَمِ*

أما إذا لم يصحَّ الاستغناءُ عن المضاف، بحيثُ لو حُذفَ لَفَسدَ المعنى، فمُراعاةُ تأنيثِ المضاف أو تذكيرِهِ واجبةٌ، نحو "جاءَ غُلامُ فاطمةَ، وسافرتْ غلامةُ خليلٍ"، فلا يقالُ "جاءَت غلامُ فاطمةَ"، ولا "سافر غلامةُ خليل"، إذ لو حُذف المضافُ في المثالين، لفسدَ المعنى".

شرح الرضي على الكافية (2 / 215):

"وقد يكتسي المضاف التأنيث من المضاف إليه، إن حسن الاستغناء في الكلام الذي هو فيه، عنه، بالمضاف إليه، يقال: سقطت بعض أصابعه، إذ يصح أن يقال: سقطت أصابعه ··· ومنه قوله: فما حب الديار شغفن قلبي * ولكن حب من سكن الديارا فاكتسى التأنيث والجمع". فقط و الله أعلم


فتوی نمبر : 144107200210

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں