بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

12 شعبان 1445ھ 23 فروری 2024 ء

دارالافتاء

 

شعبان کے فضائل


سوال

شعبان کی فضیلت کی دلیل کیا ہے ؟

جواب

متعدد احادیث سے  ماہ شعبان کی فضیلت  ثابت ہے ، حضرت عائشہ رضی اللہ تعالی عنہا فرماتی ہیں : کہ  جناب رسول اللہ صلی  اللہ علیہ وسلم جس قدر اہتمام  شعبان کے چاند دیکھنے کا فرماتے اس قدر دوسرے مہینوں کا نہیں فرماتے تھے ۔

اور  آپ صلی  اللہ علیہ وسلم اس مہینہ میں کثرت سے روزے رکھتے تھے  ۔حضرت اسامہ بن زید رضی اللہ تعالی عنہما سے روایت ہے کہ میں نے رسول اللہ  صلی اللہ  علیہ وسلم   سے عرض کیا:  میں نے  آپ کو جس قدر کثرت سے اس مہینہ میں روزے رکھتے دیکھا اتنا کسی اور مہینے میں نہیں دیکھا ، آپ صلی اللہ  علیہ وسلم نے فرمایا : رجب اور رمضان کے درمیان ایک عظمت والا مہینہ ہے جس سے لوگ غافل ہیں  ، اور اس مہینہ میں لوگوں کے اعمال اللہ رب العزت کے حضور پیش کیے جاتے ہیں ، اور مجھے یہ بات پسند ہے کہ میرے اعمال اس حالت میں پیش ہوں کہ میں روزہ سے ہوں ۔ 

اس مہینہ کی فضیلت کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ اس میں 15 شعبان کی مبارک رات آتی ہے ۔

حضرت علی  رضی اللہ تعالی عنہ سے روایت ہے کہ     جناب رسول اللہ صلی  اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: جب شعبان کی نصف رات ہو تو اس میں اللہ کی عبادت کرو اور اس کے دن کا روزہ رکھو  بے شک اللہ تبارک وتعالی اس رات میں غروب شمس کے وقت سے آسمان دنیا پر نزول کر تے ہیں اور فرماتے ہیں  : ہےکوئی بخشش کا طلب کرنے والا کہ میں اس کی بخشش کردوں ، ہے کوئی رزق طلب کرنے والا کہ میں اسے روزی دوں، ہے کوئی مصیبت زدہ کہ میں اس کو عافیت عطاکروں اسی طرح یہ اعلان طلوع فجر تک ہوتا ہے 

نیز جب رجب کا مہینہ شروع ہوتا تو   جناب رسول اللہ صلی  اللہ علیہ وسلم یہ دعا فرمایا کرتے تھے :

"اللهمّ بارِك لنا في رجب وشعبان، وبلَّغنا رمضانَ"   

ترجمہ :"اے اللہ ہمارےلیے رجب اور شعبان کے مہینہ میں برکت عطا فرما ، اور ہمیں خیر وعافیت سے رمضان تک پہنچا"

(شعب الإيمان ،کتاب الصیام ، باب صوم شعبان  (5/ 349 ط : مکتبۃ الرشد)

مصنف عبد الرزاق میں ہے:

" ‌عن ‌ابن ‌جريج، ‌عن ‌رجل، ‌عن ‌الحسن، ‌أن ‌النبي ‌صلى ‌الله ‌عليه ‌وسلم ‌قال: «‌أحصوا ‌هلال ‌شعبان ‌لرؤية ‌شهر ‌رمضان، ‌فإذا ‌رأيتموه، ‌فصوموا، ‌ثم ‌إذا ‌رأيتموه، ‌فأفطروا، ‌فإن ‌غم ‌عليكم ‌فأكملوا ‌العدة."

(كتاب الصيام ، باب الصيام (4/ 155 ت ط : المجلس العلمي ، الھند)

سنن ابی داؤد میں ہے: 

"حدثنا ‌أحمد ‌بن ‌حنبل، ‌حدثني ‌عبد ‌الرحمن ‌بن ‌مهدي، ‌حدثني ‌معاوية ‌بن ‌صالح، ‌عن ‌عبد ‌الله ‌بن ‌أبي ‌قيس، ‌قال: ‌سمعت ‌عائشة ‌رضي ‌الله ‌عنها ‌تقول: «‌كان ‌رسول ‌الله ‌صلى ‌الله ‌عليه ‌وسلم ‌يتحفظ ‌من ‌شعبان ‌ما ‌لا ‌يتحفظ ‌من ‌غيره، ‌ثم ‌يصوم ‌لرؤية ‌رمضان، ‌فإن ‌غم ‌عليه ‌عد ‌ثلاثين ‌يوما ‌ثم ‌صام."

(كتاب الصوم ، باب اذا اغمي الشهر۔ (2/ 298 ،) ط: المكتبة العصرية)

الترغيب والترهيب  میں ہے :

"عن ‌أسامة ‌بن ‌زيد ‌رضي ‌الله ‌عنهما ‌قال ‌قلت ‌يا ‌رسول ‌الله ‌لم ‌أرك ‌تصوم ‌من ‌شهر ‌من ‌الشهور ‌ما ‌تصوم ‌من شعبان قال ذاك شهر يغفل الناس عنه بين رجب ورمضان وهو شهر ترفع فيه الأعمال إلى رب العالمين وأحب أن يرفع عملي وأنا صائم ،رواه النسائي."

(كتاب الصوم، ط العلمية (2/ 71)

الترغيب والترهيب  میں ہے :

"وروي ‌عن ‌علي ‌رضي ‌الله ‌عنه ‌عن ‌النبي ‌صلى ‌الله ‌عليه ‌وسلم ‌قال ‌إذا ‌كانت ‌ليلة ‌النصف ‌من ‌شعبان ‌فقوموا ‌ليلها ‌وصوموا ‌يومها ‌فإن ‌الله ‌تبارك ‌وتعالى ‌ينزل ‌فيها ‌لغروب ‌الشمس ‌إلى ‌السماء ‌الدنيا ‌فيقول ‌ألا ‌من ‌مستغفر ‌فأغفر ‌له ‌ألا ‌من ‌مسترزق ‌فأرزقه ‌ألا ‌من ‌مبتلى ‌فأعافيه ‌ألا ‌كذا ‌ألا ‌كذا ‌حتى ‌يطلع ‌الفجررواه ابن ماجه."

«كتاب الصوم، ط العلمية» (2/ 74)

الترغيب والترهيب  میں ہے :

" وروى البيهقي من حديث عائشة رضي الله عنها أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال أتاني جبرائيل عليه السلام فقال هذه ليلة النصف من شعبان ولله فيها عتقاء من النار بعدد شعور غنم كلب ولا ينظر الله فيها إلى مشرك ولا إلى مشاحن ‌ولا ‌إلى ‌قاطع ‌رحم ولا إلى مسبل ولا إلى عاق لوالديه ولا إلى مدمن خمررَوَاهُ ابْن مَاجَه."

(كتاب الصوم، ط العلمية (2/ 73)

شعب الایمان میں ہے:

"كان النبي - صلى الله عليه وسلم - إذا دخل رجب قال: "اللهمّ بارِك لنا في رجب وشعبان، وبلَّغنا رمضانَ" وكان يقول: "ليلةُ الجمعة ليلةٌ غرَّاء، ويوم الجمعة يومٌ أزهر".

(شعب الإيمان ،کتاب الصیام ، باب صوم شعبان  (5/ 349 ط : مکتبۃ الرشد)

تحفۃ الاحوذي ميں هے:

"فهذه ‌الأحاديث ‌بمجموعها ‌حجة ‌على ‌من ‌زعم ‌أنه ‌لم ‌يثبت ‌في ‌فضيلة ‌ليلة ‌النصف ‌من ‌شعبان ‌شيء ‌والله ‌تعالى ‌أعلم."

(باب ما جاء في ليلة النصف من شعبان، ط : العلمیة  (3/ 367)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144408100981

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں