بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 25 مئی 2020 ء

دارالافتاء

 

سحری کے وقت آنکھ نہ کھلے تو روزہ کا کیا حکم ہے؟


سوال

اگر سحری کے وقت آنکھ  نا کھلے اور بندہ صبح اٹھےتو کیا روزہ ہوسکتا ہے؟

جواب

روزہ رکھنے کے لیے سحری کرنا مستحب ہے، فرض یا واجب نہیں ہے، لہذا اگر کسی شخص کی سحری کے وقت آنکھ نہ کھلی ہو تو اگر رات ہی کو  وہ روزے کی نیت کرکے سویا تھا تو اس کا روزہ درست ہوگا، اور اگر رات کو روزے کی نیت نہیں تھی تب بھی نصف النہار شرعی( صبح صادق سے غروبِ آفتاب تک  کل وقت کے نصف (آدھے) کو نصف النہار شرعی کہا جاتا ہے)  سے پہلے پہلے  روزے کی نیت کی جاسکتی ہے، بشرطیکہ صبح صادق کے بعد کچھ کھایا پیا نہ ہو۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144109200893

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے