بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

8 محرم 1446ھ 15 جولائی 2024 ء

دارالافتاء

 

سینگ ٹوٹے جانور کی قربانی کا حکم


سوال

میری ایک گائے  ہے ،جس کا سینگ2 سال پہلےٹوٹ چکا تھا، اب آدھا سینگ آ چکا ہے،لیکن ایک سینگ بڑا اورایک چھوٹا ہےاور میں نے اس گائے کے حصے بھی بنوالیے ہیں،کیااس کی  قربانی ہو گی؟

جواب

 صورتِ مسئولہ میں سائل کی گائے کا سینگ اگر جڑ سے نہیں ٹوٹا ہو ، تواس گائے کی قربانی كرنا جائز ہے۔

فتاوی عالمگیری میں ہے:

"ويجوز بالجماء التي لا قرن لها، وكذا مكسورة القرن، كذا في الكافي، وإن بلغ الكسر المشاش لا يجزيه، والمشاش رءوس العظام مثل الركبتين والمرفقين، كذا في البدائع."

(كتاب الأضحية، الباب الخامس في بيان محل إقامة الواجب، ج: 5، ص: 297، ط: دار الفكر)

فقط والله أعلم


فتوی نمبر : 144512100116

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں