بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

4 رجب 1444ھ 27 جنوری 2023 ء

دارالافتاء

 

ستر سال روزے نہ رکھنے والے کے روزوں کا فدیہ


سوال

میرے والد صاحب کا2003ء میں سترسال کی عمر میں انتقال ہوگیاتھا،میرے علم کے مطابق میرے والد صاحب نے کبھی اپنی زندگی میں  رمضان کےروزے نہیں رکھے،ان ستر سال  کے رمضان کے روزوں کا میں نے فدیہ دینا ہے،آپ مجھے بتادیں کہ میں  والد صاحب کی طرف سےستر سال کے رمضان کے روزوں کا فدیہ کیسے اداکروں ؟ستر سال کے پورے روزوں کا حساب بتادیں ۔

جواب

واضح رہے کہ ایک روزے کا فدیہ صدقہ فطر کی مقدار(گندم کے اعتبار سے پونے دوکلو گندم  یا اس کی  بازاری قیمت )ہے۔

صورت ِ مسئولہ میں سائلہ کے والد جن کی عمر ستر سال رہی پھر انتقال کرگئے ،انہوں نے اپنی پوری عمر رمضان کے روزے نہیں رکھے اور سائلہ ان کی طرف سے فدیہ اد اکرنا چاہتی ہے تو ایسی صورت میں سائلہ اپنے والد کی  ستر سالہ عمر میں  بالغ ہونے کے بعد  ستر سال تک کے سارے (تقریباً۵۵) سالوں  کا فدیہ  اس طرح ادا کرے کہ  ہر سال کے  تیس (یعنی کل  ۵۵ سالوں کے۱۶۵۰)روزوں کا فدیہ فقراء و مساکین پر صدقہ کرے اور کراچی اور اس کے مضافات کے لیے امسال 1443ھ-2022ءجامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن کے دارالافتاء کی جانب سے    صدقہ فطر کی مقدار درج ذیل ہے:

گندم:150روپے

جو: 425 روپے

کھجور: 950 روپے

کشمش: 2550 روپے

فتاوی شامی میں ہے:

"ثم اعلم أنه إذا أوصى بفدية الصوم يحكم بالجواز قطعا لأنه منصوص عليه  وأما إذا لم يوص فتطوع بها الوارث فقد قال محمد في الزيادات: إنه يجزيه إن شاء الله تعالى فعلق الإجزاء بالمشيئة لعدم النص وكذا علقه بالمشيئة فيما إذا أوصى بفدية الصلاة لأنهم ألحقوها بالصوم احتياطًا لاحتمال كون النص فيه معلولًا بالعحز فتشمل العلة الصلاة و إن لم يكن معلولاً تكون الفدية برًّا مبتدأً يصلح ماحيًا للسيئات فكان فيها شبهة كما إذا لم يوص بفدية الصوم فلذا جزم محمد بالأول و لم يجزم بالأخيرين فعلم أنه إذا لم يوص بفدية الصلاة فالشبهة أقوى."

(كتاب الصلاة، باب قضاء الفوائت، ج: 2، ص:72، ط: سعید)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144312100727

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں