بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

14 ذو القعدة 1445ھ 23 مئی 2024 ء

دارالافتاء

 

صاحبِ مال کے پاس نقدی نہ ہو تو قربانی کیسے کرے؟


سوال

 اگر کسی  صاحب  کے پاس دو ڈھائی لاکھ کا کاروبار ہو، لیکن اس کے ہاتھ میں دس بارہ ہزار روپے ہی ہیں کہ جس سے کاروبار چلتا ہے کہ اگر اس پیسے کو کسی دوسرے کام میں صرف کیا جائے تو کاروبار کے ٹھپ ہونے کا اندیشہ ہے تو کیا ایسی صورت میں اس طرح کے کاروباری شخص پر قربانی واجب ہے ؟

جواب

صورتِ  مسئولہ میں مذکورہ شخص صاحبِ نصاب ہے، اگر عید الاضحٰی کے دنوں میں بھی اس کی حیثیت یہی ہو تو اس پر  قربانی واجب  ہوگی، لہذا اگر نقدی موجود نہ ہو تو قرضہ لے کر قربانی کرنا ضروری ہوگا، تاہم وجوب کی ادائیگی کے  لیے مکمل جانور کرنا ضروری نہیں، ایک حصہ لینے سے بھی واجب  قربانی  ادا ہوجائے  گی۔

فتاوی ہندیہ میں ہے:

"(وأما) (شرائط الوجوب) : منها اليسار وهو ما يتعلق به وجوب صدقة الفطر دون ما يتعلق به وجوب الزكاة ... والموسر في ظاهر الرواية من له مائتا درهم أو عشرون دينارًا أو شيء يبلغ ذلك سوى مسكنه ومتاع مسكنه ومركوبه وخادمه في حاجته التي لا يستغني عنها، فأما ما عدا ذلك من سائمة أو رقيق أو خيل أو متاع لتجارة أو غيرها فإنه يعتد به من يساره."

( كتاب الأضحية، الباب الأول في تفسير الأضحية وركنها وصفتها وشرائطها وحكمها، ٥ / ٢٩٢، ط: دار الفكر)

دیکھیے:

قرض لے کر قربانی کرنا

فقط  واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144212200683

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں