بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

17 شعبان 1445ھ 28 فروری 2024 ء

دارالافتاء

 

صفر کے مہینے میں شادی کرنا


سوال

میرے والد صاحب بیرون ملک مقیم ہیں اوروہ صفرالمظفرمیں چھٹیاں ہوں گی تووہ پاکستان آئیں گے اور اس وقت میری شادی کرانا چاہتے ہیں لیکن ہمارے کچھ رشتے دار صفرمیں شادی کرانےکوناجائزاورمنحوس قراردیتےہیں، قرآن وسنت کی روشنی میںفرمائیں کہ کیاصفرکے مہینےمیں شادی کرناناجائزہے ؟

جواب

صفرکےمہینے میں شادی کرنا بلاکسی تردد کےجائزہےدن اورمہینےاللہ پاک کے بنائے ہوئےہیں کسی دن یا مہینہ میں اپنی ذات کےاعتبارسےکوئی نحوست نہیں پائی جاتی، حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اس تصور کی سختی سےتردید فرمائی ہے۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 143101200400

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں