بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

24 شوال 1443ھ 26 مئی 2022 ء

دارالافتاء

 

رمضان المبارک میں انتقال ہونے کی فضلیت


سوال

اگر کسی مسلمان کا رمضان المبارک میں انتقال ہوجائے تو کیااس سے سوال جواب ہوتاہے؟

جواب

ایک ضعیف حدیث میں ہے کہ اگر کسی نیک صالح  شخص کا انتقال  رمضان المبارک میں ہوجائے تو  وہ عذاب قبر سے محفوظ رہے گا،  اور اگر کوئی گناہ گار اور  غیر مسلم  رمضان المبارک میں مر جائے تو صرف ماہ مبارک کے احترام میں رمضان المبارک کے اختتام تک عذاب قبر سے محفوظ رہے گا،اور رمضان کے بعد پھر اسے عذاب ہوگا۔

شرح الصدور للسیوطی میں ہے:

"قال ابن رجب: روی باسناد ضعیف عن انس بن مالک رضی اللہ عنہ ان عذاب القبر یرفع عن الموتی فی شھر رمضان."

(باب ما ینجی من عذاب القبر،186 ،ط:دار المعرفہ لبنان)

فتاوٰی شامی میں ہے:

'' قال أهل السنة والجماعة: عذاب القبر حق وسؤال منكر ونكير وضغطة القبر حق، لكن إن كان كافراً فعذابه يدوم إلى يوم القيامة ويرفع عنه يوم الجمعة وشهر رمضان، فيعذب اللحم متصلاً بالروح والروح متصلاً بالجسم فيتألم الروح مع الجسد، وإن كان خارجاً عنه، والمؤمن المطيع لا يعذب بل له ضغطة يجد هول ذلك وخوفه، والعاصي يعذب ويضغط لكن ينقطع عنه العذاب يوم الجمعة وليلتها، ثم لا يعود وإن مات يومها أو ليلتها يكون العذاب ساعةً واحدةً وضغطة القبر ثم يقطع، كذا في المعتقدات للشيخ أبي المعين النسفي الحنفي من حاشية الحنفي ملخصاً."

 (کتاب الصلوۃ ،باب الجمعۃ :165/2:ط:ایچ ایم سعید)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144309100261

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں