بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

14 ذو القعدة 1445ھ 23 مئی 2024 ء

دارالافتاء

 

”رحیمہ“ نام رکھنا


سوال

رحیمہ نام رکھنا کیسا ہے؟

جواب

”رحیمہ “ کے معنی ”مہربان، مشفقہ ، بہت شفقت کرنے والی اور بہت رحم کرنے والی “آتے ہیں، یہ نام رکھنا درست ہے۔

لسان العرب میں ہے:

" ( رحم ) الرحمة الرقة والتعطف والمرحمة مثله وقد رحمته وترحمت عليه وتراحم القوم رحم بعضهم بعضا والرحمة المغفرة وقوله تعالى في وصف القرآن هدى ورحمة لقوم يؤمنون أي فصلناه هاديا وذا رحمة وقوله تعالى ورحمة للذين آمنوا منكم أي هو رحمة لأنه كان سبب إيمانهم رحمه رحما ورحما ورحمة ورحمة ...... وقد رحمت بالضم رحامة ورحمت بالكسر رحما ومرحوم ورحيم اسمان. "

(باب المیم: ج:12، ص:230 ط: دار صادر)

فقط والله أعلم


فتوی نمبر : 144404100758

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں