بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

13 جُمادى الأولى 1444ھ 08 دسمبر 2022 ء

دارالافتاء

 

قربانی کے جانور پر زخم کا نشان ہو تو قربانی کا حکم


سوال

قربانی کے جانور پر اگر زخم کا نشان (داغنےکا نشان ) موجود ہو اور جانور  تَن دُرست ہو تو اس کی قربانی کا کیا حکم ہے؟

جواب

جس جانور پر زخم / داغنے کا نشان ہو، لیکن اس  میں قربانی سے مانع کوئی عیب نہ ہو تو اس جانور کی قربانی  درست  ہے ۔ صرف داغنے کا نشان قربانی کے جانور میں عیب نہیں ہے، بلکہ پرانے زمانے میں  حج یا عمرے کے موقع پر لوگ قربانی کے جانور بھی ساتھ لے جاتے تھے، اور بطورِ علامت ان جانوروں کا اشعار کیا کرتے تھے، یعنی اونٹ وغیرہ کے کوہان پر زخم لگاکر نشان بنادیتے تھے، جو اس بات کی علامت ہوتی تھی کہ یہ "ہدی" (بیت اللہ کی قربانی)  کا جانور ہے، اور اسلام نے اس عمل کو برقرار رکھا، اور حدیث میں اس کا اثبات موجود ہے۔

الفتاوى الهندية - (42 / 294):

"وَمِنْ الْمَشَايِخِ مَنْ يَذْكُرُ لِهَذَا الْفَصْلِ أَصْلًا وَيَقُولُ : كُلُّ عَيْبٍ يُزِيلُ الْمَنْفَعَةَ عَلَى الْكَمَالِ أَوْ الْجَمَالِ عَلَى الْكَمَالِ يَمْنَعُ الْأُضْحِيَّةَ". 

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144211200789

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں