بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

19 ربیع الاول 1443ھ 26 اکتوبر 2021 ء

دارالافتاء

 

قربانی کا جانور ذبح کرنے کے بعد گوشت کا وزن کرکے قیمت ادا کرنا


سوال

آج کل قربانی کا جو جانور لیاجاتا ہے لوگ قصائی سے جانور لیتے ہیں، پھر قربانی  کرکے تول کر رقم دیتے ہیں،  کیا اس طرح قربانی ہوجاتی ہے یا نہیں؟

جواب

صورتِ مسئولہ میں   اگر قربانی کاجانور خریدتے وقت  باہمی رضامندی  سے زندہ جانور  کا وزن کرکے  اس کو نقد رقم یا غیر جنس کے عوض خریدا جائے تو یہ  جائز ہے، اور عقد کے وقت قیمت طے ہوجانے کے بعد  باہمی رضامندی سے رقم کی ادائیگی قربانی کرنے کے بعد بھی دے دی جائے تو یہ بھی جائز ہے ، لیکن  قربانی کا جانور اس شرط پر خریدنا کہ قربانی کے بعد جتنا گوشت نکلے گا اس کا وزن کرکے رقم ادا کی جائے گی تو  اس صورت میں چوں کہ  خریداری کے وقت جانور کی قیمت حتمی طور پر مقرر نہیں ہے، اس لیے یہ صورت جائز نہیں ہے، اس صورت میں بعد میں جھگڑا اور فساد کا اندیشہ ہے، لہذا خریداری کے وقت ایک قیمت متعین کرکے جانور خریدا جائے۔

بدائع الصنائع في ترتيب الشرائع (5 / 158، 159):

"و جهالة الثمن تمنع صحة البيع ... لأنّ المانع من الصحة جهالة الثمن؛ لكونها مفضيةً إلى المنازعة."

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144212200749

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں