بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

18 محرم 1446ھ 25 جولائی 2024 ء

دارالافتاء

 

قتل خطا کے کفارے کے روزے نہ رکھ سکے


سوال

اگر ماں سے قتل خطا میں بچہ قتل ہوا اور وہ کفارہ کی روزے نہیں رکھ سکتی تو پھر کیا کرے ان روزوں کا کفارہ ادا کرے یا کیا کرے؟ 

جواب

صورتِ  مسئولہ میں  اگر بیماری وغیرہ کی وجہ سے روزے نہیں رکھ سکتی تو  صحت ملنے کا انتظار کرے اور تاخیر پر استغفار کرتی رہے،جب رکھنے کے قابل ہوجائے رکھ لے  اگر موت تک کفارے کے روزے رکھنے کی طاقت میسر نہ آسکے تو ان کے فدیہ کی ادائیگی کی وصیت کرجائے۔اگرنہ رکھ سکنے کی کوئی اور وجہ ہے تو عذر کی  وضاحت کے ساتھ  دوبارہ سوال ارسال فرمائیں۔

فتاوی شامی   میں ہے:

"(وللشيخ الفاني العاجز عن الصوم الفطر ويفدي) وجوبًا ولو في أول الشهر وبلا تعدد فقير كالفطرة لو موسرًا وإلا فيستغفر الله، هذا إذا كان الصوم أصلًا بنفسه وخوطب بأدائه، حتى لو لزمه الصوم لكفارة يمين أو قتل ثم عجز لم تجز الفدية؛ لأن الصوم هنا بدل عن غيره، (قوله: حتى لو لزمه الصوم إلخ) تفريع على مفهوم قوله: أصلًا بنفسه، وقيد بكفارة اليمين والقتل احترازًا عن كفارة الظهار والإفطار إذا عجز عن الإعتاق لإعساره وعن الصوم لكبره، فله أن يطعم ستين مسكينًا لأن هذا صار بدلًا عن الصيام بالنص والإطعام في كفارة اليمين ليس ببدل عن الصيام بل الصيام بدل عنه، سراج. وفي البحر عن الخانية وغاية البيان: وكذا لو حلق رأسه وهو محرم عن أذى ولم يجد نسكا يذبحه ولا ثلاثة آصع حنطة يفرقها على ستة مساكين وهو فان لم يستطع الصيام فأطعم عن الصيام لم يجز لأنه بدل (قوله لم تجز الفدية) أي في حال حياته بخلاف ما لو أوصى بها كما مر تحريره."

( كتاب الصوم، فصل في العوارض المبيحة لعدم الصوم، ٢ / ٤٢٧، ط: دار الفكر)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144504101001

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں