بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

7 ذو الحجة 1443ھ 07 جولائی 2022 ء

دارالافتاء

 

قرض پر رقم دی ہو تو قربانی واجب ہے یا نہیں؟


سوال

اگرکسی شخص پر دولاکھ کا قرضہ ہے اور اسی شخص کا کسی اور پر ڈھائی لاکھ قرض ہو تو اس شخص کے لیے قربانی کرنے کا کیا حکم ہے؟

جواب

صورت مسئولہ میں اگر مذکورہ شخص کے پاس فقط یہی  ڈھائی لاکھ روپے کی رقم ہے جو اس نے کسی کو قرض دی ہوئی ہے، اور ا س شخص پر خود بھی دو لاکھ کا قرض ہے، اس کے علاوہ مزید کوئی نقد، مال تجارت یا استعمال سے زائد سامان موجود نہیں جو نصاب (ساڑھے باون تولہ چاندی کی موجودہ مالیت )کے برابر ہو،تو اس شخص پر قربانی واجب نہیں ہے۔

فتاوی ہندیہ میں ہے :

’’ولو كان عليه دين بحيث لو صرف فيه نقص نصابه لا تجب ، وكذا لو كان له مال غائب لا يصل إليه في أيامه‘‘،

(کتاب الاضحیۃ، الباب الاول فی تفسیرھا و رکنھاوصفتھا و شرائطھاوحکمھا، ج:۵،ص:۳۶۱،ط:دارالکتب العلمیۃ بیروت)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144310100604

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں