بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

4 شوال 1445ھ 13 اپریل 2024 ء

دارالافتاء

 

قرض کی ادائیگی کے لیے ناجائز کاروبار میں سرمایہ کاری


سوال

 مجھ پر قرض بہت زیادہ ہے اور اتارنے کی کوئی صورت نظر نہیں آرہی تو اگر میں کچھ رقم بی فار یو یا اس طرح کے دیگر بزنس جن میں رقم لگانا جائز نہیں ہے، کیا صرف قرض اتارنے کی نیت سے رقم لگا سکتا ہوں؟

جواب

قرض اتارنے کے لیے ناجائز اور حرام کاروبار میں  رقم لگانا جائز نہیں  ہے۔ اور  حرام رقم حاصل  ہوگئی تو بھی اس کا حکم یہ ہے کہ توبہ واستغفار کے  ساتھ  اس  کو  واپس کرنا ضروری ہے، اگر واپس کرنا ممکن نہ ہو تو ثواب کی نیت کے بغیر صدقہ کرنا ضروری ہوگا ، اس سے  قرض اتارنا جائز نہیں ہے۔

باقی  قرض  کی  ادائیگی  کے  لیے  ان  چند  باتوں  پر  عمل کریں، ان شاء اللہ ان کی برکت سے اللہ تعالی قرض کے بوجھ سے خلاصی عطا فرمائیں گے:

(1) سب سے پہلے گناہوں سے توبہ کریں اور استغفار کی کثرت کریں، استغفار کی کثرت سے مال واولاد میں ہرطرح کی خیروبرکت کا وعدہ قرآن مجید میں موجود ہے۔

(2) نمازو روزے کی پابندی کریں۔

(3) زکاۃ واجب ہے تو وقت پر اداکردیں۔

(4) سود سے دور رہیں۔

(5)روزانہ مغرب یا عشاء کے بعد سورہ واقعہ پڑھا کریں۔

(6) یہ دعا روزانہ 21 بار پڑھیں :"اَللّٰهُمَّ اكْفِنِيْ بِحَلَالِكَ عَنْ حَرَامِكَ وَأَغْنِنی بِفَضْلِكَ عَمَّنْ سِوَاكَ".

(7) ہر نماز کے بعد یہ دعا پڑھیں:"اَللّٰهُمَّ إِنِّيْ أَعُوْذُبِكَ مِنَ الْهَمِّ وَالْحَزَنِ، وَأَعُوْذُبِكَ مِنَ الْعَجْزِ وَالْكَسْلِ، وَأَعُوْذُبِكَ مِنْ غَلَبَةِ الدَّيْنِ وَقَهْرِ الرِّجَالِ".

(8)  دورد شریف صبح و شام ۲۱-۲۱ مرتبہ پڑھاکریں۔ اور  اسی طرح سورۃ الشوریٰ کے دوسرے رُکوع کی آخری آیت: ’’اَللّٰهُ لَطِیْفٌ بِعِبَادِه ...الخ“  (۲۵واں پارہ، سورۃ الشوریٰ آیت نمبر: 19) آخر تک اسی (80) مرتبہ فجر کے بعد پڑھا کریں، اگر داڑھی منڈاتے یا کتراتے ہیں تو اس سے توبہ کریں۔  فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144206201328

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں