بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

13 ذو القعدة 1442ھ 24 جون 2021 ء

دارالافتاء

 

قبرکے سامنے ہاتھ اٹھاکردعاکرنے کا حکم


سوال

 قبر کےسامنے ہاتھ اٹھاکردعاکرنا کیسا ہے ؟

جواب

عام حالات میں قبرستان جاکرہاتھ اٹھاکےدعاکرناثابت ہےچنانچہ حضرت عائشہ رضی اللہ عنھا فرماتی ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم جنت البقیع میں تشریف لائے اورکافی دیرٹہرے رہے پھرتین مرتبہ ہاتھ اٹھا کردعاکی (مسلم شریف۔1-313،کتاب الجنائز،ط،قدیمی۔) البتہ قبرستان میں دعامانگنے کی صورت یہ ہے کہ قبلہ رخ ہوکرہاتھ اٹھائے جائیں اورمیت ومرحومین کے لیے دعاکی جائے، قبرکی طرف رخ کرکےدعانہ کریں تاکہ کسی کو فساد وعقیدہ پربدگمانی نہ ہو۔


فتوی نمبر : 143101200009

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں