بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

14 ذو الحجة 1445ھ 21 جون 2024 ء

دارالافتاء

 

پانچ تولہ سونا اور دو لاکھ نقدی پر زکات کا حکم


سوال

 اگر کسی شخص کے پاس پانچ تولہ سونا ہو اور اس کے ساتھ  2 دولاکھ نقدی بھی ہو تو ایسے شخص پر زکوۃ واجب ہے کہ نہیں؟  اگر واجب ہے تو اس پر کتنی زکوۃ  آئے گی؟

جواب

صورتِ  مسئولہ میں مذکورہ شخص  چوں کہ صاحبِ  نصاب  ہے، لہذا زکات کا سال مکمل ہونے  پر پانچ تولہ سونے کی قیمت معلوم کرکے  اس میں دو لاکھ  نقدی جمع کرلے، اور دونوں کے مجموعہ  کو چالیس سے تقسیم کردے، اور حاصل جواب یعنی ڈھائی فیصد بطور زکات  ادا کردے تو اس کی زکات ادا ہوجائے گی۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144208201451

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں