بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

23 ذو القعدة 1441ھ- 15 جولائی 2020 ء

دارالافتاء

 

نانا یا نانی کے انتقال کے بعد عید کی خوشی منانا


سوال

اگر  کسی کے نانا یا نانی فوت ہوجائیں تو  کیا وہ  دوسروں کو عید مبارک نہیں بول سکتے یا عید کی خوشی نہیں منانی چاہیے؟

جواب

صورتِ مسئولہ میں نانا یا نانی کا انتقال کے ہوجانے کی صورت میں پسماندگان کے لیے عید کے دن ایک دوسرے کو مبارک باد دینا اور جائز طریقہ سے خوشی کا اظہار کرنا جائز ہے؛ شرعی اعتبار سے شوہر کے علاوہ کسی کے انتقال کے بعد تین دن سے زیادہ سوگ منانا جائز نہیں؛ اس لیے فوت شدگان کی پہلی عید پر باقاعدہ سوگ منانا یا خلافِ شرع کام کرنا جائز نہیں ہے۔

مزید تفصیل کے لیے درج ذیل فتوی پر ملاحظہ فرمائیں:

فوت شدگان کی پہلی عید نہ منانا اور ماتم کرنا

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144110200046

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں