بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

24 ذو الحجة 1442ھ 04 اگست 2021 ء

دارالافتاء

 

نماز میں پنجوں کے بل کھڑا ہونا


سوال

پنجوں کے بل کھڑا ہو کر نماز ادا کرنے کا کیا حکم ہے؟

جواب

نماز میں قیام کی حالت میں  مکمل قدم پر کھڑا ہونا اور  انگلیوں کا رخ قبلہ کی طرف کرنا مسنون ہے، کسی شرعی عذر کے بغیر پنجوں کے بل کھڑا ہونا  خلافِ  سنت و مکروہ  طریقہ ہے،  لہذا پورے قدم پر کھڑے ہونے کا معمول بنایا جائے۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144210200880

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں