بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

8 محرم 1446ھ 15 جولائی 2024 ء

دارالافتاء

 

نماز میں آستین اتارنے کا حکم


سوال

کیا قومہ یا جلسہ کے دوران دونوں ہاتھوں کی آستین نیچے کرنا عمل ِکثیر شمار ہوگااور اس سے نماز فاسد ہو جاۓگی؟

جواب

واضح رہے کہ اگر کسی شخص نےنماز شروع کرنے سے پہلے کسی  وجہ سے آستین چڑھائی ہوں تو نماز میں داخل ہونے سے پہلے اسےآستین اتار لینی چاہیے،اور اگر اسی حالت میں نماز شروع کردی تو آہستہ آہستہ اور تھوڑی تھوڑی کرکے آستین اتارے،جس سے عملِ کثیر لازم نہ آۓ،کیوں کہ  بلا عذر آستین چڑھی ہونے کی حالت  میں نماز پڑھنا مکروہ ہے۔

الغرض عمل ِقلیل سےآستین نیچے کرنے  سے نماز فاسد نہیں ہوگی،بلکہ نماز اس وقت فاسد ہوگی کہ جب عمل ِ کثیر اختیار کیا جاۓ ،یعنی خود یہ سمجھے کہ وہ نماز میں نہیں ہے،قومہ اور جلسہ میں آستین اتارنے کا یہی حکم ہے ۔

فتاوی شامی میں ہے:

"(و) كره (كفه) أي رفعه ولو لتراب ‌كمشمر ‌كم ‌أو ذيل.

(قوله ‌كمشمر ‌كم ‌أو ذيل) أي كما لو دخل في الصلاة وهو مشمر كمه أو ذيله، وأشار بذلك إلى أن الكراهة لا تختص بالكف وهو في الصلاة كما أفاده في شرح المنية، لكن قال في القنية: واختلف فيمن صلى وقد شمر كميه لعمل كان يعمله قبل الصلاة أو هيئته ذلك اهـ ومثله ما لو شمر للوضوء ثم عجل لإدراك الركعة مع الإمام. وإذا دخل في الصلاة كذلك وقلنا بالكراهة فهل الأفضل إرخاء كميه فيها بعمل قليل أو تركهما؟ لم أره: والأظهر الأول بدليل قوله الآتي ولو سقطت قلنسوته فإعادتها أفضل تأمل. هذا، وقيد الكراهة في الخلاصة والمنية بأن يكون رافعا كميه إلى المرفقين. وظاهره أنه لا يكره إلى ما دونهما. قال في البحر: والظاهر الإطلاق لصدق كف الثوب على الكل اهـ ونحوه في الحلية، وكذا قال في شرح المنية الكبير: إن التقييد بالمرفقين اتفاقي. قال: وهذا لو شمرهما خارج الصلاة ثم شرع فيها كذلك، أما لو شمر وهو فيها تفسد لأنه عمل كثير."

(كتاب الصلاة، باب ما يفسد الصلاة وما يكره فيها، مطلب في الكراهة التحريمية والتنزيهية، ج:1، ص:640، ط:سعيد)

فقط والله أعلم


فتوی نمبر : 144508102331

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں