بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

7 رجب 1444ھ 30 جنوری 2023 ء

دارالافتاء

 

نو تولہ سونا اور نو لاکھ قرضہ ہونے کی صورت میں زکوٰۃ کا حکم


سوال

 اگر کسی عورت کے پاس 9 تولہ سونا ہو اور اس پر 9 لاکھ روپے قرضہ بھی ہے جو گھریلو اخراجات کی مد سے ہے ۔اور اس نے ادا نہیں کیا  تو وہ اب زکوہ کیسے اور  کتنی ادا کرے گی ؟

جواب

صورتِ  مسئولہ میں مذکورہ عورت کی ملکیت میں سونا، چاندی، اور نقدی وغیرہ  جو کچھ موجود ہے، اس کی مجموعی مالیت  لگانے کے بعد، جتنا قرضہ اُن پر ہے، (مثلًا:  9 لاکھ  روپے) اسے منہا کیا جائے، اس کے  نکالنے کے بعد اگر  ان کے پاس ساڑھے باون تولہ چاندی کے بقدر   مالیت (سونا اور نقدی ملاکر) بچتی ہو تو اس کی ڈھائی فیصد زکوٰۃ لازم ہوگی، اگر قرض کی رقم زیادہ ہو یا اس کو نکالنے کے بعد   ساڑھے باون تولہ چاندی کے بقدر رقم نہ بچتی ہو تو اس پر زکوٰۃ لازم نہیں ہوگی۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144109200271

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں