بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

10 شعبان 1445ھ 21 فروری 2024 ء

دارالافتاء

 

مردہ شخص کی چیزیں استعمال کرنا


سوال

کیا کسی مردہ شخص کی چیزیں استعمال کی جاسکتی ہیں مثلا" کپڑے وغیرہ یا اسے رکھا جا سکتا ہے بطور سووینیئر?

جواب

مرحوم کی تمام مملوکہ اشیاء انکے ورثاء کی ملک ہیں ، جس کی تقسیم ان کے مابین ان کے حصص کے مطابق ہوگی،البتہ اگر کوئی نابالغ نہ ہو تو ان کی اجازت سے کوئی بھی چیز رکھی اور استعمال بھی کی جاسکتی ہے۔

الفتاوى الهندية (2/ 301)
فشركة الجبر أن يختلط المالان لرجلين بغير اختيار المالكين خلطا لا يمكن التمييز بينهما حقيقة بأن كان الجنس واحدا أو يمكن التمييز بضرب كلفة ومشقة نحو أن تختلط الحنطة بالشعير أو يرثا مالا 


فتوی نمبر : 144112200486

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں