بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

4 شوال 1445ھ 13 اپریل 2024 ء

دارالافتاء

 

متبسم نام رکھنا کیسا ہے؟


سوال

بیٹی کا متبسم نام رکھنا کیسا ہے ؟ 

جواب

 متبسم كا  معني ہے :مسکرانے والا، تبسم کرنے والا، آہستہ ہنسنے والا، زیرِ لب مسکرانے والا،  یہ مذکر کے لیے استعمال ہوتا ہے، لڑکی کے لیے "متبسمہ" استعما ل ہوتا ہے،لڑکی کا متبسمہ نام رکھنا درست ہے، تاہم بہتر یہ ہے کہ  لڑکی کا نام صحابیات رضی اللہ عنہن یا نیک خواتین کے ناموں پر رکھا جائے۔

"الصحاح في اللغة والعلوم" میں ہے:

"التبسم: دون الضحك. يقال: بسم بالفتح يبسم بسما فهو باسم، وابتسم وتبسم. والمبسم: الثغر. ورجل مبسام وبسام: كثير التبسم".

(كتاب الباء، باب السين،ص:313،ط:الشاملة)

"مقاييس اللغة"میں ہے:

(بسم) الباء والسين والميم أصل واحد، وهو إبداء مقدم الفم لمسرة; وهو دون الضحك يقال: بسم يبسم وتبسم وابتسم".

(كتاب الباء، باب السين،ج:1،ص:249،ط: دارالفكر)

"لسان العرب"میں ہے:

"بسم: بسم يبسم بسما وابتسم وتبسم: وهو أقل الضحك وأحسنه. وفي التنزيل: فتبسم ضاحكا من قولها

؛ قال الزجاج: التبسم أكثر ضحك الأنبياء، عليهم الصلاة والسلام. وقال الليث: بسم يبسم بسما إذا فتح شفتيه كالمكاشر، وامرأة بسامة ورجل بسام. وفي صفته، صلى الله عليه وسلم:أنه كان جل ضحكه التبسم".

(كتاب الميم، باب الباء،ج:12،ص:50،ط:دار صادر)

فقط والله تعالي اعلم


فتوی نمبر : 144507101372

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں