بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

13 ذو الحجة 1445ھ 20 جون 2024 ء

دارالافتاء

 

موت اور موت کے بعد کا تذکرہ کرنا


سوال

موت اور موت کے بعد کے احوال کا آپس میں تذکرہ کرنا کیسا ہے؟

جواب

واضح رہے کہ موت اور موت کے بعد کا تذکرہ کرنے کے بارے میں کافی احادیث موجود ہیں، جس میں اس بات کی تاکید کی گئی ہے موت کو کثرت سے یاد کیا کرو،لہذا باہمی تذکرہ کرنا صحیح ہے۔

جیسا کہ سننِ ترمذی میں ہے:

'' عن أبي هريرة قال : قال رسول الله صلى الله عليه و سلم أكثروا ذكر هاذم اللذات يعني الموت''

ترجمہ:حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہےکہ رسول اللہﷺنے فرمایا کہ لذتوں کو ختم کرنے والی چیز(موت)کو زیادہ یاد کرو۔

(کتاب الزھد، باب الموت، رقم الحدیث:2307، ج:4، ص:553، ط: دار إحياء التراث العربي)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144510100322

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں