بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

5 ذو الحجة 1445ھ 12 جون 2024 ء

دارالافتاء

 

ایک دوسرے کو ہاتھ لگائے بغیر میاں بیوی کو انزال ہونے سے غسل کا حکم


سوال

اگر بیوی اور شوہر آپس میں رومانٹک باتیں کر رہے تھے اور اسی دوران کسی ایک کو یا دونوں کو انزال ہو گیا تو غسل فرض ہے؟ یاد رہےکہ  دونوں نے کسی کو چھوا نہیں اور ہاتھ وغیرہ کا استعمال بھی نہیں ہوا ہے۔مثال یہ کہ جیسے شوہر ملک سے یا اپنے گھر سے دور ہے اور دونوں میاں بیوی فون پر بات کر رہے تھے۔

جواب

صورت مسئولہ میں میاں یا بیوی میں سے جس کو بھی انزال ہوگا اس پر غسل واجب ہوگا  چاہے ایک دوسرے کو ہاتھ بھی نہ لگایا ہو۔

فتاوی ہندیہ میں ہے:

"منها الجنابة وهي تثبت بسببين أحدهما خروج المني على وجه الدفق والشهوة من غير إيلاج باللمس أو النظر أو الاحتلام أو الاستمناء.

كذا في محيط السرخسي من الرجل والمرأة في النوم واليقظة. كذا في الهداية وتعتبر الشهوة عند انفصاله عن مكانه لا عند خروجه من رأس الإحليل. كذا في التبيين."

(کتاب الطہارۃ، باب ثانی فصل ثالث ج نمبر ۱ ص نمبر ۱۴، دار الفکر)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144401101270

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں