بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

13 ذو القعدة 1441ھ- 05 جولائی 2020 ء

دارالافتاء

 

مسجد کے امام کو فطرہ دینا


سوال

ایک امام مسجد ہے اس کی تنخواہ دس ہزار ہے،  کیا رمضان میں لوگ اس کو فطرانہ بطورِ تعاون دے سکتے ہیں، اجرت کے علاوہ ؟

جواب

فدیہ اور فطرانہ (صدقہ فطر ) کا مصرف وہی ہے جو زکاۃ کا مصرف ہے،  یعنی ایسا مسلمان جو سید اور ہاشمی نہ ہو اور  اس کی ملکیت میں ضرورت و استعمال سے زائد اتنا مال یا سامان نہ ہو جس کی مالیت ساڑھے باون تولہ چاندی کی قیمت تک پہنچے۔

اگر مذکورہ امام مستحق زکاۃ ہیں تو ان کو فطرہ کی رقم دی جاسکتی ہے، اگر وہ مستحق زکاۃ نہیں ہیں تو ان کو  صدقہ فطر دینا درست نہیں ہے، بلکہ نفلی صدقات اور عطیات سے امام مسجد کا تعاون کرنا چاہیے، یہ بہت ہی اجر وثواب کا باعث ہے۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144109200403

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں