بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

14 ذو القعدة 1445ھ 23 مئی 2024 ء

دارالافتاء

 

مذی نکلنے سے وضو یا غسل کا حکم


سوال

اگر کسی آدمی کو کسی لڑکے یا لڑکی کو ہاتھ لگانے کے وقت بالکل پانی کے رنگ کا پانی نکلے تو کیا اس پر غسل واجب ہوتا ہے ؟اور کیا اسی حالت میں نماز پڑھنا درست ہے ؟

جواب

واضح رہےکہ کسی لڑکے یا لڑکی کوچھونے کی وجہ سے آلۂ تناسل سے  نکلنے والا پانی پتلا سفید چکنا ہو،  جس کے نکلنے سے شہوت بجائے کم ہونےکے بڑھ جاتی ہے، اور بغیر احساس کے نکل جائے تو اس سے غسل واجب نہیں ہوتا، نماز کے لیے صرف استنجاء وضو کرنا کافی ہوگا، باقی   ایسی حالت میں کسی لڑکے یا لڑکی کو  ہاتھ نہ لگائے، اور لڑکی  غیر محرم  اور قابلِ شہوت  ہو تو شہوت کے بغیر بھی اسے ہاتھ  لگانا جائز  نہیں ہے۔

فتاویٰ شامی میں ہے:

"(وفرض) الغسل (عند) خروج (مني).......(لا) عند (مذي أو ودي) بل الوضوء منه ومن البول جميعا على الظاهر

(قوله: لا عند مذي) أي لا يفرض الغسل عند خروج مذي كظبي بمعجمة ساكنة وياء مخففة على الأفصح، وفيه الكسر مع التخفيف والتشديد، وقيل هما لحن ماء رقيق أبيض يخرج عند الشهوة لا بها، وهو في النساء أغلب، قيل هو منهن يسمى القذى بمفتوحتين نهر."

(کتاب الطھارۃ، باب فرض الغسل، 1/ 165، ط: سعید)

المذی: بوسہ یا ملاعبت کے باعث بلا ارادہ پیشاب کی نالی سے نکلنے والا پتلا پانی                                                                                                                         (القاموس الوحید، 1535، ط: ادارہ اسلامیات کراچی)

فقط واللہ أعلم


فتوی نمبر : 144509101968

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں