بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

9 شوال 1441ھ- 01 جون 2020 ء

دارالافتاء

 

مجنون آدمی کو زکاۃ دینا


سوال

اگر کوئی شخص پاگل ہے اور غریب بھی ہے تو کیا اس کو  زکاۃ دے سکتے ہیں ؟

جواب

اگر پاگل/مجنون شخص زکاۃ کا مستحق ہے تب بھی اسے  زکاۃ دینے سے زکاۃادا نہ ہوگی، البتہ  مستحق ہونے کی صورت میں اگر  اس کا ولی/ سرپرست اس کی طرف سے قبضہ کرلے تو زکاۃ  ادا  ہوجائے گی۔

بدائع الصنائع (2/ 39):
"وكذا لو دفع زكاة ماله إلى صبي فقير أو مجنون فقير وقبض له وليه أبوه أو جده أو وصيهما جاز؛ لأن الولي يملك قبض الصدقة عنه". فقط والله أعلم


فتوی نمبر : 144109202472

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے