بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

16 ذو الحجة 1445ھ 23 جون 2024 ء

دارالافتاء

 

حضور صلی اللہ علیہ وسلم کا کسی صحابی سے قرآن سننا


سوال

رحلت سے قبل آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے کس صحابی سے پورا قرآن پاک سنا تھا ؟

جواب

واضح رہےکہ کتبِ احادیث میں  کافی تلاش کے بعد کہیں کوئی ایسی روایت  نہیں  مل سکی جس میں کسی ایسےصحابی کا تذکرہ ہو جس  نے آپ علیہ الصلاۃ والسلام کو مکمل قرآن سنایا ہو، البتہ  بعض مواقع پرآپ صلی اللہ علیہ وسلم کا  بعض صحابہ کرام سے قرآن کا کچھ حصہ سننا منقول ہے، جیسا کہ حضرت عبداللہ  بن مسعود رضی اللہ عنہ کے بارے میں روایات منقول ہیں کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ان سے فرمایا : مجھے قرآن پڑھ کر سناؤ؛ انہوں نے عرض کیا :میں آپ کو قرآن سناؤں جب کہ وہ تو آپ پر نازل ہوا ہے؟ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے جواباًارشاد فرمایا:"بے شک میں اپنے علاوہ کسی دوسرے سے قرآن سننا پسند کرتا ہوں"۔

صحیح بخاری میں ہے:

"عن ‌عبد الله رضي الله عنه قال: قال لي النبي صلى الله عليه وسلم: اقرأ علي القرآن، قلت: آقرأ عليك وعليك أنزل؟ قال: إني أحب أن أسمعه من غيري."

(‌‌كتاب فضائل القرآن، باب من أحب أن يسمع القرآن من غيره، رقم الحديث:5049، ج:6، ص:195، ط:دارطوق النجاة بيروت)

صحیح مسلم میں ہے:

"عن عبد الله، قال: قال لي رسول الله صلى الله عليه وسلم: «‌اقرأ ‌علي القرآن» قال: فقلت: يا رسول الله ‍ أقرأ عليك؟ وعليك أنزل؟ قال: «إني أشتهي أن أسمعه من غيري»، فقرأت النساء حتى إذا بلغت:{ فكيف إذا جئنا من كل أمة بشهيد وجئنا بك على هؤلاء شهيدا }رفعت رأسي، أو غمزني رجل إلى جنبي، فرفعت رأسي فرأيت دموعه تسيل."

(كتاب الصلاة، باب فضل استماع القرآن، وطلب القراءة من حافظه للاستماع والبكاء عند القراءة والتدبر، رقم الحديث:800، ج:1، ص:551، ط:دار احياء التراث العربي)

مشکاۃ المصابیح میں ہے:

"عن عبد الله بن مسعود قال: قال لي رسول الله صلى الله عليه وسلم وهو على المنبر: «اقرأ علي» . قلت: أقرأ عليك وعليك أنزل؟ قال: «إني أحب أن أسمعه من غيري» . فقرأت سورة النساء حتى أتيت إلى هذه الآية (فكيف إذا جئنا من كل أمة بشهيد وجئنا بك على هؤلاء شهيدا) قال: «حسبك الآن» . فالتفت إليه فإذا عيناه تذرفان."

(الفصل الاول من باب آداب التلاوة ودروس القرآن ،جلد۱، ص:۶۷۲، ط: الکتب الاسلامی بیروت)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144407101338

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں