بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

12 شعبان 1445ھ 23 فروری 2024 ء

دارالافتاء

 

کسی مسلمان کا کسی قادیانی سے بلڈنگ کرایہ پر لے کر آٹے کی فیکٹری چلانا اور اس سے بائیکاٹ کا حکم


سوال

کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ فلور مل جو کہ ایک قادیانی کی ملکیت ہے اور وہ بلڈنگ کا ماہانہ کرایہ وصول کرتا ہے، جب کہ  قادیانی سے مسلمان اس بلڈنگ کو  کرایہ پر لے کر فلور مل  چلاتے ہیں اور آٹا مارکیٹ میں فروخت کرتے ہیں، کیا شرعی لحاظ سے مسلمانوں کو اس آٹے کا بائیکاٹ کرنا چاہیے یا خریدنا چاہیے ؟

جواب

قادیانیوں کا حکم عام کفار کا نہیں ہے، بلکہ قادیانی شرعاً مرتد اور زندیق کے حکم میں ہیں؛ لہذا ان سے لین دین رکھنا، ان کی دکان کرایہ پر لینا  اور اسی طرح دیگر معاملات کرنا سب ناجائز ہے۔لہذا قادیانی سےکرایہ داری کا معاملہ ختم کرنا واجب ہے۔

لہٰذا صورتِ مسئولہ میں اگر واقعۃ مذکورہ بلڈنگ قادیانی کی ملکیت ہے جس سے ایک مسلمان نے کرایہ پر لی ہے تو  سب سے پہلے قادیانی کی بلڈنگ کرایہ پر لے کر فلور مل چلانے والے مسلمان کو شرعی حکم سمجھا کر قادیانی کے ساتھ کرایہ داری کا معاملہ ختم کرنے   اور دوسری متبادل جگہ تلاش کرنے کے لیے کہا جائے، اگر سمجھانے کے باوجود بھی وہ کرایہ داری کا معاملہ ختم کرنے کے لیے تیار نہیں  تو جب تک  وہ قادیانی کے ساتھ کرایہ داری ختم نہ کرے اس فلور مل کے آٹے کا بائیکاٹ کیا جائے۔

فتاوٰی بینات میں ”قادیانیوں کے ساتھ موالات“ کے عنوان سے ایک تفصیلی فتوٰی میں مذکور ہے:

”جو کافر مرتد اور باغی مسلمانوں کے خلاف ریشہ دوانیوں میں مصروف ہوں ان سے خرید و فروخت اور لین دین، جب کہ اس سے ان کو تقویت حاصل ہوتی ہو جائز نہیں، بلکہ ان کی اقتصادی نا کہ بندی کر کے ان کی جارحانہ قوت کو مفلوج کردینا واجب ہے“

(کتاب العقائد: ج: 1، ص: 239، ط: مکتبہ بینات)

فیض الباری میں ہے:

"قوله: (أتي علي بزنادقة) ... إلخ، والزناديق قيل هم: الذين يتعبدون - بالزند - والقاف ملحق في المعربات؛ قلت: والزنديق من يحرف في معاني الألفاظ، مع إبقاء ألفاظ الإسلام كهذا اللعين في القاديان، يدعي أنه يؤمن بختم النبوة، ثم يخترع له معنى من عنده يصلح له بعده الختم دليلًا على فتح باب النبوة، فهذا هو الزندقة حقًّا، أي التغيير في المصاديق، وتبديل المعاني على خلاف ما عرفت عند أهل الشرع، وصرفها إلى أهوائه مع إبقاء اللفظ على ظاهره، والعياذ بالله". 

(کتاب استتابة المرتدین و المعاندین و قتالهم: ج:1، ص:104، ط: دار الکتب العلمیة)

فتاوی شامی میں ہے:

"فإن الزنديق يموّه كفره ويروّج عقيدته الفاسدة، ويخرجها في الصورة الصحيحة".

(كتاب الجهاد، باب المرتد:ج:4، ص:242، ط: دار الفکر)

احکام القرآن میں ہے:

"{إن الذين يحادون الله ورسوله أولئك في الأذلين} ... الثانية: استدل مالك رحمه الله من هذه الآية على معاداة القدرية وترك مجالستهم. قال أشهب عن مالك: لاتجالس القدرية وعادهم في الله، لقوله تعالى: {لاتجد قومًا يؤمنون بالله واليوم الآخر يوادون من حاد الله ورسوله} قلت: وفي معنى أهل القدر جميع أهل الظلم والعدوان".

(سورة المجادلة (58) : آية 22،ج:17، ص:306، ط: دارالکتب المصریة)

فقط والله أعلم


فتوی نمبر : 144407100064

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں