بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

16 محرم 1446ھ 23 جولائی 2024 ء

دارالافتاء

 

کیا زکوۃ دیتے ہوئے زکوۃ کا بتانا ضروری ہے؟ مسجد و مدرسہ کی تعمیر میں زکوۃ خرچ کرنا


سوال

کیا زکوۃ  دیتے وقت  زکوۃ  دینے والا زکوۃ   لینے والے کو  یہ بتائے گا کہ یہ رقم زکوۃ کی رقم ہے؟  نیز یہ بھی بتائیں  کہ کیا ہم اپنی زکوۃ  کی رقم مسجد یا مدرسے کی تعمیر میں خرچ کر سکتے ہیں یا نہیں؟

جواب

زکات ادا کرتے وقت مستحق کو بتانا ضروری نہیں ہے کہ یہ    زکات ہے، اسے بتائے بغیر دینے سے یا ہدیہ کہہ کردینے سے بھی  زکات ادا ہوجائے گی، بشرطیکہ دینے والے کی نیت   زکات کی ہو۔

ملحوظ رہے کہ زکات کا مستحق وہ  مسلمان ہے  جس   کے پاس اس کی بنیادی ضرورت  و استعمال ( یعنی رہنے کا مکان ، گھریلوبرتن ، کپڑے  اور استعمال کے  سامان وغیرہ)سے زائد،  نصاب کے بقدر  (یعنی صرف سونا ہو تو ساڑھے سات تولہ سونا یا صرف چاندی ہو تو ساڑھے باون تولہ چاندی یا اس کی موجودہ قیمت  کے برابر)  مال  یا سامان موجود  نہ ہو  اور وہ سید/ عباسی نہ ہو،  ایسے شخص  کو  مالک بناکر زکات دینے سے زکات ادا ہوگی، اور اس کے لیے ضرورت کے مطابق  زکات لینا جائز ہے۔

لہذا مسجد  یا  مدرسے کی تعمیر میں  زکات کی رقم خرچ کرنا درست نہیں، اگر خرچ کی گئی تو زکات ادا نہیں ہوگی۔

الفتاوى الهندية (1/ 171):

"و من أعطى مسكيناً دراهم و سماها هبةً أو قرضاً و نوى الزكاة فإنها تجزيه، و هو الأصح، هكذا في البحر الرائق ناقلاً عن المبتغي والقنية."

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144208201319

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں