بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

8 شوال 1441ھ- 31 مئی 2020 ء

دارالافتاء

 

کیا غیر مسلم قرآن کریم حفظ کرسکتا ہے؟


سوال

 کیا غیر مسلم قرآنِ عظیم حفظ کر سکتا ہے؟

جواب

غیر مسلم کو قرآن کی تعلیم دینا کہ وہ اس کی ہدایت کا ذریعہ بن جائے یہ جائز ہے، البتہ مسلمان کا اپنے اختیار سے غیر مسلم کو قرآن دینا منع ہے، ہاں اگر غیر مسلم غسل کرلے تو مسلمان اس کو قرآن دے سکتا ہے، اور اگر غیر مسلم خود اپنے طور پر قرآن بغیر وضو پڑھ لے یا حفظ کرلے، اور مسلمان اس کو نہ دے  تو اس کا گناہ مسلمان کو نہیں ہوگا۔

البحر الرائق شرح كنز الدقائق (8 / 231):
"وفي الذخيرة: إذا قال الكافر من أهل الحرب أو من أهل الذمة: علّمني القرآن فلا بأس بأن يعلمه ويفقهه في الدين، قال القاضي علي السغدي: إلا أنه لايمس المصحف، فإن اغتسل ثم مسه فلا بأس به".

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (1 / 177):
"ويمنع النصراني من مسّه، وجوّزه محمد إذا اغتسل، ولا بأس بتعليمه القرآن والفقه عسى يهتدي. 

(قوله: ويمنع النصراني) في بعض النسخ الكافر، وفي الخانية: الحربي أو الذمي. (قوله: من مسه) أي المصحف بلا قيده السابق. (قوله: وجوزه محمد إذا اغتسل) جزم به في الخانية بلا حكاية خلاف. قال في البحر: وعندهما يمنع مطلقًا".  فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144107201376

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے