بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

10 شعبان 1441ھ- 04 اپریل 2020 ء

دارالافتاء

 

خلع یافتہ عورت سے نکاح اور سابقہ شوہر کی اولاد کی نسبت


سوال

1: کسی خلع یافتہ عورت کے ساتھ جس کی چار برس کی بیٹی بھی ہو، شادی کرنا کیسا ہے اور کیا شادی کے بعد اس کی بیٹی کو باپ کا نام دیا جاسکتا ہے؟

2: اگر کوئی لڑکی جس کی ایک بیٹی بھی ہو جو اللہ، رسول اور کعبہ شریف کا واسطہ دے کہ مجھ سے شادی کرلو،میں نے بھت ظلم دیکھے ہیں اور یہ بھی کہے کہ اگر مجھ سے شادی نہ کی تو میں خود کو مار لونگی یا غلط راستے پر نکل جاؤنگی،اس لڑکی کو سہارا دینا کیسا ہے ؟ کیا میں اس سے شادی کرلوں؟ 3: کیا ماں باپ سے چھپ کر میں اس لڑکی سے شادی کرسکتا ہوں اور اس کی بیٹی کو اپنا نام دے سکتا ہوں؟ ھمارا دین اس بارے میں کیا کہتا ہے؟ 

جواب

1,2: خلع یافتہ عورت سے اس کی عدت گذرنے کے بعد اس کی رضامندی سے نکاح کیا جاسکتا ہے،البتہ اس کے سابقہ شوہر کی بیٹی کی نسبت اس کے حقیقی باپ ہی کی طرف کرنا لازم ہے ، حقیقی باپ کے علاوہ کسی اور کی طرف نسبت ناجائز اور ازروۓ حدیث جنت سے محرومی کا باعث ہے۔ 3: عاقل بالغ آدمی اپنی مرضی سے نکاح کرسکتا ہے البتہ اخلاقی اور معاشرتی اعتبار سے والدین کی مرضی کے خلاف شادی کرنا اچھا نہیں ہے، اس لیئے سائل اگر اسی خاتون کو اپناشریک حیات بنانا چاہتا ہے تو بہتر یہ ہے والدین کو راضی کرکے ہی اس سے نکاح کرے ۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 143603200009

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے