بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

18 ذو القعدة 1445ھ 27 مئی 2024 ء

دارالافتاء

 

خون ٹیسٹ کروانے سے روزے کا حکم


سوال

کیا بلڈ ٹیسٹ کروانے سے روزہ ٹوٹ جاتا ہے؟

جواب

واضح رہے کہ روزے کی حالت میں جسم کے ظاہری حصے سے خون نکلنے یا نکلوانے سے روزہ فاسد نہیں ہوتا، لہٰذا صورتِ مسئولہ میں روزے دار کے لیے خون ٹیسٹ کروانا جائز ہے۔

السنن الكبرى للبيهقي میں ہے:

"عن ابن عباس، أنه ذكر عنده الوضوء من الطعام، قال الأعمش مرة: ‌والحجامة للصائم، فقال: " إنما الوضوء مما يخرج وليس مما يدخل، وإنما الفطر مما دخل وليس مما خرج " وروينا عن النبي صلى الله عليه وسلم أنه قال للقيط بن صبرة: " وبالغ في الاستنشاق إلا أن تكون صائما".

(‌‌كتاب الصيام، ‌‌باب الإفطار بالطعام وبغير الطعام، رقم الحديث:8253، ج:4، ص:435، ط:دارالكتب العلمية)

بدائع الصنائع میں ہے:

"قال النبي - صلى الله عليه وسلم -: الفطر ‌مما ‌يدخل، والوضوء مما يخرج".

(كتاب الصوم، فصل أركان الصيام، ج:2، ص:92، ط:دارالكتب العلمية)

فقط والله أعلم


فتوی نمبر : 144509101030

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں