بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

13 ذو القعدة 1445ھ 22 مئی 2024 ء

دارالافتاء

 

خلیسہ فلذہ اور مشائم نام رکھنا


سوال

میں اپنی بیٹی کا نام خلیسہ اور فلذہ اور مشائم رکھنا چاہتا ہوں؟

جواب

1۔ خلیسہ کا معنی ہے:  (1)درندہ کے منہ سے چھڑایا ہوا جانور جو ذبح سے پہلے مر جائے۔ (2)چھینی ہوئی چیز۔ (القاموس الوحید ص: 464) یہ نام رکھنا درست نہیں ۔

2۔ ’’فلذہ‘‘  (ذال کے ساتھ) کے معنی ہیں :’’ جگر، گوشت کا ٹکڑا ، سونے اور چاندی کا ٹکڑا، (ج: فلذ، افلاذ) ، اور (زا کے ساتھ) الفلز کے معنی : ’’ایک کیمیاوی عنصر جس میں معدنیاتی چمک اور حرارت و بجلی  کو منتقل کرنے کی صلاحیت ہوتی ہے، چمک دار دھات، بھاری اور سخت مضبوط   آدمی۔یہ نام رکھنا بھی مناسب نہیں۔

المعجم الوسيط میں ہے:

"( الفلذة ) القطعة من الكبد واللحم والذهب والفضة ( ج ) فلذ وأفلاذ وأفلاذ الأكباد الأولاد وأفلاذ الأرض كنوزها.
( الفولاذ ) نوع من الصلب متين جدا ويصنع بخلط الصلب بعناصر أخرى ( مج ).
( المفلوذ ) سيف مفلوذ مطبوع من الفولاذ.
( الفلز )عنصر كيماوي يتميز بالبريق المعدني والقابلية لتوصيل الحرارة والكهربا ومن الرجال الشديد الغليظ الصلب تشبيها له بها والبخيل المتشدد تشبيها له بها ليبسه أو لبعده عن طالبيه والضريبة تجرب عليها السيوف".

(ج:2،ص:700،ط:دار الدعوۃ)

3۔ "مَشَائِم" شَأمٌ مادّے سے ماخوذ ہےعربی لغت میں اس لفظ کا معنی ہے بدشگونی کا آلہ۔(القاموس الوحید، المادّۃ:ش، أ،م، ص:835، ط:ادارۃ الاسلامیات)

الهداية الي بلوغ النهاية في علم معاني القرآن وتفسیره میں ہے:

"فَأَرْسَلْنَا عَلَيْهِمْ رِيحًا صَرْصَرًا فِي أَيَّامٍ نَحِسَاتٍ لِنُذِيقَهُمْ عَذَابَ الْخِزْيِ فِي الْحَيَاةِ الدُّنْيَا وَلَعَذَابُ الْآخِرَةِ أَخْزَى وَهُمْ لَا يُنْصَرُونَ (16) وَأَمَّا ثَمُودُ فَهَدَيْنَاهُمْ فَاسْتَحَبُّوا الْعَمَى عَلَى الْهُدَى فَأَخَذَتْهُمْ صَاعِقَةُ الْعَذَابِ الْهُونِ بِمَا كَانُوا يَكْسِبُونَ (17) وَنَجَّيْنَا الَّذِينَ آمَنُوا وَكَانُوا يَتَّقُونَ (18) 

وقوله: {في أَيَّامٍ نَّحِسَاتٍ}. قال ابن عباس: نحسات: متتابعات. وقال مجاهد: نحسات: مشائم.

وقال قتادة: نحسات: (مشائم نكدات). وقال ابن زيد: نحسات/ ذات شر، ليس فيها من الخير شيء.

وقال الضحاك: نحسات: شداد".

(سورۃ فصلت، رقم الآیۃ:16، ج:6، ص:288، ط:دارالکتب العلمیۃ)

مذکورہ نام نامناسب معنیٰ کی وجہ سے بچی کے لیے منتخب کرنا درست نہیں ،بچی کے ناموں کےلئے بہتر یہ ہے کہ صحابیات رضی اللہ عنہن یا نیک خواتین کے ناموں میں سے کوئی نام رکھا جائے، یا اچھا بامعنی عربی نام رکھا جائے، جس کے لیے ہمارے ویب سائٹ اور ایپلی کیشن میں " اسلامی نام" کے عنوان سے ایک آپشن موجود ہے جس میں سے آپ اپنے مرضی کے نام کا انتخاب کرسکتے ہیں،   تاہم آپ کی  سہولت کے لیے چند  صحابیات رضی اللہ عنہن کے اسماء گرامی درج ذیل ہیں: 

اُمامه . اَرویٰ .آمِنَه . بُریَده . بَریرَه . تَیما . ثُوَبِیه . جُمانه. جُوَیریه . حَمامه . حَرمَله . حَمنَه . حواء . حسّانه . خالده . خَنساء . خَولَه . دُرّه . ذُرّه . رُبَـیِّع (ربیع). رَمله . رُفَیده. رُقُیقه. رُمَیثه . رُمَیصاء . رَوضه . رابطه . زِِنّیره . زُنَیره. سائِبه . ساره .  سِدره . سَدوس . سُدَیسه . سُعاد . سلامه . سُمَیره . سُمَیکه . سَفّانه . شَیماء . شُمَیله . عاتِکه. عَمره . عَفراء .  عُماره . عَمّاره . غَزوه . فَارعه . فُرَیعَه . قَیله . لُبابه . ماریه . ماویه . نائله . نَفیسه . هند . یُسَیرَه 

 وہ صحابیات رضی اللہ عنہن جن کے نام "أمّ" کے ساتھ شروع ہوتے ہیں : 

أم بَرده . أم ثَوبان . أم حارثه . أم حبیبه . أم حَرام . أم حکیم . أم دَحاح . أم الدرداء . أم رُومان . أم زُفر . أم سُلَیم . أم سُلَیط . أم شَرِِیک . أم عطیّه . أم عمّاره . أم فَروه . أم کُلثوم . أم مِسطَح . أم نِیار.  

فقط والله أعلم


فتوی نمبر : 144405101970

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں