بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

4 شوال 1441ھ- 27 مئی 2020 ء

دارالافتاء

 

جمعہ کی جماعت کے لیے کتنے افراد کا ہونا ضروری ہے؟


سوال

جمعہ کے لیے کتنے آدمیوں کا ہونا شرط ہے؟

جواب

جمعہ کی جماعت قائم کرنے کے لیے امام کے علاوہ کم از کم تین عاقل بالغ مرد  مقتدیوں کا ہونا ضروری ہے۔ واضح رہے کہ جمعہ کا قیام شہر، فنائے شہر یا بڑی بستی میں درست ہے، گاؤں میں اگرچہ چار یا اس سے زیادہ بالغ افراد جمع ہوں تب بھی وہ ظہر کی نماز باجماعت ادا کریں گے۔

البحر الرائق شرح كنز الدقائق - (5 / 171):
"( قوله: والجماعة وهم ثلاثة) أي شرط صحتها أن يصلي مع الإمام ثلاثة فأكثر؛ لإجماع العلماء على أنه لا بد فيها من الجماعة، كما في البدائع، وإنما اختلفوا في مقدارها فما ذكره المصنف قول أبي حنيفة ومحمد، وقال أبو يوسف: اثنان سوى الإمام؛ لأنهما مع الإمام ثلاثة، وهي جمع مطلق؛ ولهذا يتقدمهما الإمام ويصطفان خلفه، ولهما أن الجمع المطلق شرط انعقاد الجمعة في حق كل واحد منهم وشرط جواز صلاة كل واحد منهم ينبغي أن يكون سواه فيحصل هذا الشرط ثم يصلي، ولايحصل هذا الشرط إلا إذا كان سوى الإمام ثلاثة؛ إذ لو كان مع الإمام اثنان لم يوجد في حق كل واحد منهم الشرط بخلاف سائر الصلوات؛ لأن الجماعة فيها ليست بشرط، كذا في البدائع". فقط والله أعلم


فتوی نمبر : 144108201536

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے