بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

18 ربیع الاول 1443ھ 25 اکتوبر 2021 ء

دارالافتاء

 

جاوید احمد غامدی سے متعلق وضاحت


سوال

دورِ حاضرکے میڈیا سکالر اور جدید نظریات کے پاسبان جناب جاویداحمدغامدی (جو کہ ایک نظریہ بنتا جارہاہے) سے متعلق اہلِ سنت و الجماعت کا واضح موقف کیا ہے؟ کیوں کہ ان کے نظریات کا مطالعہ کرتے ہوئے کسی نے بھی کما حقہ رائے نہیں دی ہے؟ اس کی وجوہات کیا ہیں؟

جواب

جاوید احمد غامدی صاحب کے بہت سے نظریات قرآن و حدیث کے صریح نصوص کے خلاف اور اہلِ سنت و الجماعت کے اجماعی و اتفاقی عقائد سے متصادم ہیں، جن کے بارے میں علماءِ کرام وقتًا فوقتًا اپنی تحریرات کے ذریعہ رہنمائی کرتے ہتے ہیں، غامدی صاحب کے چند عقائد  درج ذیل ہیں:

1...  عیسیٰ علیہ السلام وفات پاچکے ہیں۔ [میزان، علامات قیامت، ص:178،طبع 2014]

2...  قیامت کے قریب کوئی مہدی نہیں آئے گا۔ [میزان، علامات قیامت، ص:177،طبع مئی2014]

3... (مرزا غلام احمد قادیانی) غلام احمد پرویز سمیت کوئی بھی کافر نہیں، کسی بھی امتی کو کسی کی تکفیر کا حق نہیں ہے۔ [اشراق،اکتوبر2008،ص:67]

4... حدیث سے دین میں کسی عمل یا عقیدے کا اضافہ بالکل نہیں ہوسکتا۔ [میزان، ص:15]

5...سنتوں کی کل تعداد صرف 27 ہے۔ [میزان،ص:14]

6... ڈاڑھی سنت اور دین کا حصہ نہیں۔ [مقامات، ص:138،طبع نومبر2008]

7... اجماع دین میں بدعت کا اضافہ ہے۔ [اشراق، اکتوبر2011،ص:2]

8... مرتد کی شرعی سزا نبی کریم ﷺ کے زمانے کے ساتھ خاص تھی۔ [اشراق، اگست2008،ص:95]

9... رجم اور شراب نوشی کی شرعی سزا حد نہیں۔ [برہان،ص:35 تا 146،طبع فروری 2009]

10... اسلام میں ”فساد فی الارض“ اور ”قتلِ نفس“کے علاوہ کسی بھی جرم کی سزا قتل نہیں ہوسکتی۔ [برہان، ص:146،طبع فروری 2009]

11... قرآن پاک کی صرف ایک قراء ت ہے، باقی قراءتیں عجم کا فتنہ ہیں۔ [میزان،ص:32،طبع اپریل2002....بحوالہ تحفہ غامدی از مفتی عبدالواحد مدظلہم]

12... فقہاءکی آراءکو اپنے علم و عقل کی روشنی میں پرکھاجائےگا۔ [سوال وجواب، ہٹس 727، 19جون 2009]

13... ہرآدمی کو اجتہاد کا حق ہے۔ اجتہاد کی اہلیت کی کوئی شرائط متعین نہیں، جو سمجھے کہ اسے تفقہ فی الدین حاصل ہے وہ اجتہاد کرسکتا ہے۔ [سوال وجواب،ہٹس 612،تاریخ اشاعت:10 مارچ 2009]

14... نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اور صحابہ کرام کے بعد غلبہ دین کی خاطر (اقدامی) جہاد ہمیشہ کے لیے ختم ہے۔ [اشراق، اپریل2011، ص:2]

15... تصوف عالم گیر ضلالت اور اسلام سے متوازن ایک الگ دین ہے۔ [برہان، ص:181، طبع 2009]

16...  حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ باغی اور یزید بہت متحمل مزاج اور عادل بادشاہ تھا۔ واقعۂ کربلا سوفیصد افسانہ ہے۔ [بحوالہ غامدیت کیا ہے؟ از مولاناعبدالرحیم چاریاری]

17... مسلم و غیر مسلم اور مرد و عورت کی گواہی میں فرق نہیں ہے۔ [برہان، ص:25 تا 34،طبع فروی 2009]

18... زکاۃ کے نصاب میں ریاست کو تبدیلی کا حق حاصل ہے۔ [اشراق، جون 2008، ص:70]

19...  یہود ونصاریٰ کے لیے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم پر ایمان لانا ضروری نہیں، اِس کے بغیر بھی اُن کی بخشش ہوجائے گی۔[ایضاً]

20 ...موسیقی فی نفسہ جائزہے۔ [اشراق، فروری2008،ص:69]

21... بت پرستی کے لیے بنائی جانے والی تصویر کے علاوہ ہر قسم کی تصویریں جائز ہیں۔ [اشراق،مارچ، 2009، ص:69]

22... بیمہ جائز ہے۔ [اشراق، جون 2010، ص:2]

23... یتیم پوتا دادے کی وراثت کا حق دار ہے۔ مرنے والے کی وصیت ایک ثلث تک محدودنہیں۔ وارثوں کے حق میں بھی وصیت درست ہے۔ [اشراق، مارچ2008، ص:63 ... مقامات: 140، طبع نومبر2008]

24... سور کی نجاست صرف گوشت تک محدود ہے۔ اس کے بال، ہڈیوں، کھال وغیرہ سے دیگر فوائد اٹھانا جائز ہے۔ [اشراق،اکتوبر1998،ص:89....بحوالہ : غامدیت کیا ہے؟]

25 ... سنت صرف دینِ ابراہیمی کی وہ روایت ہے جس کو نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم نے دین کی حیثیت سے جاری فرمایا۔ اور یہ قرآن سے مقدم ہے۔ اگر کہیں قرآن کا ٹکراؤ یہود ونصاریٰ کے فکر وعمل سے ہوگا تو قرآن کے بجائے یہود و نصاریٰ کے متواتر عمل کو ترجیح ہوگی۔ [میزان،ص:14،طبع2014]

26 ...عورت مردوں کی امامت کرا سکتی ہے۔ [ماہنامہ اشراق، ص 35 تا 46،مئی2005]

27... دوپٹہ ہمارے ہاں مسلمانوں کی تہذیبی روایت ہے، اس کے بارہ میں کوئی شرعی حکم نہیں ہے،  دوپٹے کو اس لحاظ سے پیش کرنا کہ یہ شرعی حکم ہے، ا س کا کوئی جواز نہیں۔ [ماہنامہ اشراق، ص 47،شمارہ مئی2002]

28...مسجدِ اقصی پر مسلمانوں کا نہیں اس پر صرف یہودیوں کا حق ہے۔ [ اشراق جولائی، 2003اور مئی، جون2004]

29... بغیر نیت، الفاظِ طلاق کہنے سے طلاق واقع نہیں ہوتی۔ [اشراق،جون2008،ص:65]

لہذا ایسے بد عقیدہ شخص کی بات شرعاً معتبر نہیں، مزید تفصیل کے لیے ماہ نامہ بینات میں شائع ہونے والے قسط وار مضمون کا مطالعہ کرلیا جائے، (ماہِ صفر 1436ھ بمطابق دسمبر 2014ء سے لے کر جمادی الاولی 1437ھ بمطابق مارچ 2016ء سولہ قسطوں میں شائع ہوا ہے) پہلی قسط کا لنک درج ذیل ہے، اس کے بعد کی قسطیں مذکورہ لنک سے ماہنامہ بینات کے اگلے شماروں میں ملاحظہ کی جاسکتی ہیں:

جاوید احمد غامدی سیاق وسباق کے آئینہ میں(پہلی قسط)

فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144205201108

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں