بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

18 ذو القعدة 1445ھ 27 مئی 2024 ء

دارالافتاء

 

مسجد کی تعمیر کے وقت گھر میں جماعت کرانا


سوال

 ہمیں جگہ کی قلت کی وجہ سے مسجد کی دوبارہ تعمیر کرنی مطلوب ہے۔ مسجد شہید کرنے کے بعد ہمارے پاس کوئی ایسی زمین نہیں ہے جہاں پرہم نماز پڑھ سکے کیا ہم مسجد کی تعمیر تک کسی کے گھر میں باجماعت نماز پڑھ سکتے ہیں؟

جواب

صورت مسئولہ میں حتی الامکان کوشش کرنی چاہیے کہ مسجد کی جماعت تر ک نہ ہو  بلکہ تعمیر کا نظام اس طرح بنایا جائے کہ بعض حصہ منہدم کیا جائے اور باقی حصہ میں نماز ہوتی رہے  لیکن اگر مسجد میں جماعت کی صورت ممکن نہ ہو تو گھر میں جماعت کر سکتے ہیں  لیکن ایسی صورت میں مسجد کی جماعت کا ثواب نہیں ملے گا۔

فتاوی شامی میں ہے:

"وإن صلى أحد في البيت بالجماعة ‌لم ‌ينالوا فضل جماعة المسجد وهكذا في المكتوبات كما في المنية." 

(کتاب الصلوۃ , باب الوتر و النوافل جلد 2 ص: 45 ط: دارالفکر)

فقط واللہ اعلم 


فتوی نمبر : 144408100592

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں