بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

19 ذو الحجة 1441ھ- 10 اگست 2020 ء

دارالافتاء

 

زوجہ، دو بیٹیوں، چار بھائیوں اور پانچ بہنوں میں جائیداد کی تقسیم


سوال

ورثا ء: ایک زوجہ، دو بیٹیاں غیر شادی شدہ ، چار بھائی جن میں سے ایک غیر شادی شدہ ہے، پانچ بہنیں جن میں سے دو غیر شادی  شدہ ہیں۔ جائید اد کی تقسیم کس طرح کی جائے؟نیز متوفی کے انتقال کے وقت بیٹیاں نابالغ تھیں, مگر جائیداد کی تقسیم کے وقت بیٹیاں بالغ ہیں۔

جواب

مذکورہ صورت میں بیوہ کا حصہ ہے: 12 اعشاریہ 50 فیصد۔

ہر بیٹی کا حصہ 33اعشاریہ 33 فیصد۔

ہر بھائی کا حصہ 3اعشاریہ 2 فیصد۔

اور ہر بہن کا حصہ ایک اعشاریہ 60 فیصد بنے گا۔

مرحوم کی وفات کے وقت بیٹیوں کے نابالغ ہونے اور ترکہ تقسیم ہونے کے وقت بالغ ہونے سے تقسیم میں فرق نہیں آئے گا۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144109203275

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں