بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

8 محرم 1446ھ 15 جولائی 2024 ء

دارالافتاء

 

ایمپلانٹ کرنے سے وضو ٹوٹتا ہے یا نہیں؟


سوال

 موانع حمل کے طریقوں میں سے ایک جدید طریقہ ایمپلانٹ ہے، یہ ماچس کی تیلی کی طرح مڑا ہوا ایک راڈ ہوتا ہے جو بالائی بازو میں جلد کے نیچے رکھا جاتا ہے۔اب سوال یہ ہے کہ کیا اس کے رکھوانے سے وضو اور غسل پر کوئی اثر پڑتا ہے یا نہیں؟

جواب

صورتِ مسئولہ میں ایمپلانٹ کرتے وقت اگر راڈ رکھنے کی وجہ سے بدن سے کوئی گندگی(خون،پیپ وغیرہ)نکلےتو اس سے وضو ٹوٹ جاۓگاورنہ نہیں،البتہ غسل لازم نہیں ہوگا۔

فتاوی شامی میں ہے:

"(وينقضه) خروج منه كل خارج (نجس) بالفتح ويكسر (منه) أي من المتوضئ الحي معتادا أو لا، من السبيلين أو لا (إلى ما يطهر) بالبناء للمفعول: أي يلحقه حكم التطهير."

(کتاب الطہارۃ،مطلب نواقض الوضوء،134/1،ط:سعید)
فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144511101019

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں